یاسین ملک نے کہا کہ آبادی کا تناسب تبدیل کرنے کی بھارتی سازشوں کو ناکام بنائیں گے۔

گاندربل: غیر کشمیریوں کو حقوق شہریت دینے کیخلاف احتجاجی جلوس
30 جنوری 2015 (21:50)
0

مقبوضہ کشمیر میں جموں و کشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمد یاسین ملک نے جمعہ کو گاندر بل میں بھارتی حکومت کے غیر کشمیریوں کو شہریت کے حقوق دینے کے منصوبے جس کا مقصد مسلم اکثریت کو اقلیت میں تبدیل کرنا ہے ' کے خلاف ایک بڑے احتجاجی جلوس کی قیادت کی۔
محمد یاسین ملک نے جلو س سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کشمیری مقبوضہ علاقے کی آبادی کا تناسب تبدیل کرنے کی تمام بھارتی سازشوں کو ناکام بنائیں گے۔
انہوں نے کہا کہ غیر ریاستی باشندوں کو علاقے میں آباد کرنا غیر قانونی ہے اور یہ مقبوضہ کشمیر کے ماحول کے لئے انتہائی خطرناک ہے۔
سرینگر' سوپور ہ ترال اور دوسرے علاقوں میں لوگوں نے مسلم اکثریت کو اقلیت میں تبدیل کرنے کے بھارتی حکومت کے منصوبے کے خلاف احتجاجی مظاہرے کیے۔
حریت رہنمائوں ظفر اکبر بٹ اور محمد یوسف نقاش نے سرینگر اور گاندر بل میں عوامی اجتماعات سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کشمیر ایک سیاسی تنازعہ ہے جس کو پاکستان ' بھارت اور کشمیریوں کی حقیقی قیادت کے درمیان بامعنی سہ فریقی مذاکرات کے ذریعے سیاسی طور پر حل کیا جانا چاہیے۔
نیو یارک میں قائم انسانی حقوق کی نگران تنظیم نے بھارت کی مقبوضہ کشمیر میں مسلح افواج کے خصوصی اختیارات کے کالے قانون کوختم کرنے میں ناکامی کو شرمناک قرار دیاہے۔
تنظیم کی جانب سے جاری کی گئی ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ یہ قانون فوجیوں کے خلاف مقدمات چلانے سے انہیں تحفظ فراہم کرتا ہے جس کی جمہوریت میں کوئی جگہ نہیں۔