وزیراعظم نے کہا کہ بین الاقومی معیار تک پہنچنے کیلئے تعلیمی شعبے کو تنظیم نو اور اصلاحات کی ضرورت ہے۔

تعلیم میں سرمایہ کاری مستقبل کیلئے حقیقی سرمایہ کاری ہے:وزیراعظم
29 مارچ 2014 (21:43)
0

وزیراعظم نواز شریف نے علم پر مبنی معیشت کے ساتھ ہم آہنگ تعلیمی نظام کی ضرورت پر زور دیا ہے۔


انہوں نے آج(ہفتہ) اسلام آباد میں تعلیم کے بارے میں ایک کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ تعلیم میں سرمایہ کاری دراصل ملک کے مستقبل کیلئے حقیقی سرمایہ کاری ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ بین الاقومی معیار تک پہنچنے کیلئے تعلیمی شعبے کو تنظیم نو اور اصلاحات کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہاکہ تعلیم سے متعلق اہداف کے حصول کیلئے صوبوں کے تعاون سے حال ہی میں ایک قومی عملی منصوبہ شروع کیا گیا ہے اور سکولوں میں زیادہ سے زیادہ داخلوں کو یقینی بنانے کی غرض سے خواندگی تحریک شروع کی جائے گی۔


کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے تعلیم سے متعلق اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل کے خصوصی نمائندے گورڈن برائون نے تعلیم کے فروغ کیلئے موجودہ حکومت کے اقدامات کی تعریف کی۔

 

گورڈن برائون نے اس سے قبل وزیراعظم سے ملاقات کی اور پاکستان میں تعلیم کے فروغ کیلئے کوششوں پر تبادلہ خیال کیا۔


وزیراعظم نے کہا ہے کہ حکومت معاشرے میں مساوی تعلیم ،صنفی مساوات ، خواندگی کی شرح میں اضافے اور سیکھنے کے مواقع کی فراہمی پر توجہ دے رہی ہے۔
انہوں نے کہا کہ حکومت نے 2013-16 کیلئے قومی منصوبے میں میلینیم ترقیاتی اہداف کے حصول کے لئے تیز رفتار حکمت عملی شروع کی ہے۔

اسلام آباد میں یوتھ فورم سے خطاب کرتے ہوئے اقوام متحد ہ کے خصوصی ایلچی برائے تعلیم گورڈن برائون نے پاکستانی عوام پر زور دیاہے کہ ملک میں تعلیم کے فروغ کیلئے مل کر کام کریں۔

انہوں نے تعلیم کے بجٹ میں اضافے کیلئے نوازشریف کے عزم کا خیر مقدم کیا۔اقوام متحدہ کے نمائندے نے کہا کہ تعلیم کے فروغ کیلئے متعدد ممالک پاکستان سے تعاون کرنا چاہتے ہیں ' یورپی یونین اضافی دس کروڑ یورو فراہم کرے گا جبکہ امریکہ بھی اس مقصد کیلئے اضافی امداد دے رہا ہے۔

انہوں نے کہا سعودی عرب ' متحدہ عرب امارات ' برطانیہ اور آسٹریلیا بھی پاکستان میں بچوں اور بچیوں کی تعلیم کے منصوبوں میں سرمایہ کاری میں دلچسپی رکھتے ہیں۔اس موقع پرگورنرپنجاب چوہدری محمد سرور نے کہا کہ وزیراعظم موجودہ حکومت کی مد ت کے دوران تعلیمی بجٹ دگنا کرنے کا عزم رکھتے ہیں۔

گلوبل پارٹنرشپ فار ایجوکیشن کی چیف ایگزیکٹو آفیسرALICE ALBRIGHT نے کہا ہے کہ ان کی تنظیم پاکستان سمیت دنیا کے پچاس ممالک میں معیاری تعلیم کے فروغ کیلئے کام کررہی ہے۔

تعلیم و تربیت کے وزیر مملکت انجینئر بلیغ الرحمن نے کہا کہ اس وقت مجموعی ملکی پیداوار کا دوفیصد تعلیم پر خرچ کیا جارہا ہے اور حکومت اسے چار فیصد تک بڑھانا چاہتی ہے۔انہوں نے کہا تمام سیاسی جماعتوں میں اس بات پر مکمل اتفاق رائے پایا جاتا ہے کہ عسکریت پسندی اور تشدد کے رجحانات کی حوصلہ شکنی کیلئے تعلیم کا بجٹ بڑھایا جانا چاہیے۔