نواز شریف نے کہاکہ اپنے عوام کے لئے معاشی ترقی کے ذریعے ہم خطے میں امن و استحکام لاسکتے ہیں۔

چین پاکستان اقتصادی راہداری انتہائی اہم اقتصادی منصوبہ ہے:وزیراعظم
29 اگست 2016 (15:37)
0

وزیراعظم نوازشریف نے کہا ہے کہ چین پاکستان اقتصادی راہداری 21صدی میں جنوبی ایشیا کے لئے ایک انتہائی اہم اقتصادی منصوبہ ہے۔ وہ پیر کے روز اسلا م آباد میں پاک چین فرینڈ شپ سنٹر میں سی پیک سربراہ اجلاس کا افتتاح کررہے تھے۔ وزیراعظم نے کہاکہ اپنے عوام کے لئے معاشی ترقی کے ذریعے ہم خطے میں امن و استحکام لاسکتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ ماضی میں ہمارے خطے نے بڑے پیمانے پر تصادم اور محرومیوں کا سامنا کیا ہے۔ اب وقت آگیا ہے کہ امن و خوشحالی اور غربت ، بے روزگاری اور پسماندگی جیسے چیلنجوں کا خاتمہ کرکے خطے کی تاریخ میں ایک نئے دور کا آغاز کریں۔
وزیراعظم نے کہاکہ چین پاکستان اقتصادی راہداری ایک نیا تصور ہے جو مشترکہ اہداف اور امنگوں کے مطابق ترقی پر مبنی سوچ ہے۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان نے تمام عالمی فورموں پر ہمیشہ چین کی حمایت کی اور چین عالمی برادری میں پاکستان کے وقار اور مفادات کا بھرپور دفاع کرتا رہاہے۔ وزیراعظم نے کہاکہ چین پاکستان اقتصادی راہداری اقتصادی ترقی اور عالمی اقتصادی تعاون کاایک منفر د نمونہ ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ چین پاکستان اقتصادی راہداری سے نہ صرف پاکستان اورچین کے درمیان ایک مضبوط زمینی رابطہ قائم ہوگا بلکہ اس سے پاکستان میں سامان کی نقل و حمل اور ترسیل کے ڈھانچے کو بہتر بنانے کے لئے مواقع بھی میسر آئیں گے۔

پاکستان میں ریلوے کے منصوبوں اور ریلوے کے ڈھانچے پر دس ارب ڈالر سے زائد خرچ کئے جائیںگے۔ اسی طرح چین پاکستان اقتصادی راہداری سے پاکستان کے توانائی کے بحران پر قابو پانے میں بھی مدد ملے گی کیونکہ اس کے تحت پاکستان کے توانائی کے شعبے میں 35 ارب ڈالر مالیت کے منصوبے شامل ہیں۔ انہوں نے کہاکہ چین پاکستان اقتصادی راہداری سے پاکستان چین کے آزمودہ تجربات، ایجادات اور طریقہ کار سے بھی مستفید ہوسکے گا۔
نواز شریف نے کہاکہ چین پاکستان اقتصادی راہداری ایک خاص منصوبہ ہے جس سے ملک کے تمام علاقوں کو فائدہ ہوگا۔ سربراہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے منصوبہ بندی اورترقی کے وفاقی وزیر احسن اقبال نے کہاکہ 46 ارب ڈالر کے چین پاکستان اقتصادی راہداری منصوبہ پاکستان چین تعلقات میں ایک نئے باب کا آغاز ہوگا جس کا مقصد سیاسی تعلقات کو سٹرٹیجک اقتصادی تعلقات میں تبدیل کرنا ہے۔
منصوبے کے چیدہ چیدہ تفصیلات بتاتے ہوئے وفاقی وزیر نے کہاکہ 18 ارب ڈالر مالیت کے کئی منصوبوں پر عملدرآمد جاری ہے جبکہ 17 ارب ڈالر کے دیگر منصوبے منظوری کے حتمی مراحل میں ہیں جس پر مستقبل قریب میں عملدرآمد شروع ہوجائے گا۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان اورچین کی قیادت کے پختہ عزم کی بدولت چین پاکستان اقتصادی راہداری پر قلیل مدت کے دوران عملدرآمد شروع ہوگیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ کوئٹہ ، گوادر شاہراہ اس سال مکمل کرلی جائے گی جبکہ مغربی روٹ میں شامل دیگر شاہراہیں د و سال کے عرصے میں مکمل کر لی جائیں گی۔