قومی اسمبلی میں حزب اختلاف کےارکان کی طرف سے اٹھائے گئےنکات اعتراض پراظہار خیال کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ حکومت سیاستدانوں اور سیکورٹی کے اداروں سمیت تمام متعلقہ افراد سے مشاورت کر رہی ہے

28 جنوری 2014 (13:30)
0

وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے کہا ہے کہ حکومت قومی اتفاق رائے سے دہشتگردی کا مسئلہ حل کرنا چاہتی ہے۔


 


قومی اسمبلی میں حزب اختلاف کے ارکان کی طرف سے اٹھائے گئے نکات اعتراض پر اظہار خیال کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ حکومت سیاستدانوں اور سیکورٹی کے اداروں سمیت تمام متعلقہ افراد سے مشاورت کر رہی ہے تاکہ طالبان کی طرف سے مذاکرات کی نئی پیشکش پر غور کیا جائے۔


 


چوہدری نثار علی خان نے کہا کہ تمام سیاسی جماعتوں کو یہ فیصلہ کرنے کیلئے متحد ہونا چاہئیے کہ آیا طالبان گروپوں سے مذاکرات کئے جائیں یا انکے خلاف کارروائی کی جانی چاہئے۔


وزیر داخلہ نے کہا کہ بنوں دھماکے کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے تحریک طالبان پاکستان کے ترجمان نے ایسے الفاظ استعمال کئے جن کا مطلب یہ تھا کہ وہ دوسرے گروپوں اور دھڑوں کے ساتھ مذاکرات ناکام بنانا چاہتے ہیں۔


انہوں نے کہا کہ یہ بات حیران کن ہے کہ پاکستان تحریک طالبان سے جب بھی رابطہ کیا گیا تو اسنے مثبت ردعمل کا اظہار نہیں کیا اور اب جب قوم اس مسئلے سے نمٹنے کیلئے کسی بھی طریقے سے متفق ہو رہی ہے تو پاکستان تحریک طالبان مذاکرات کی حمایت کر رہی ہے۔