1947 میں آج کے دن بھارتی فوج نے بین الاقوامی قانون اور تقسیم ہند کے منصوبے کی کھلی خلا ف ورزی کرتے ہوئے سری نگر میں اپنی فوج اتار دی۔

File photo

کنٹرول لائن کے آر پار اور دنیا بھر میں مقیم کشمیریوں نے یوم سیاہ منایا
27 اکتوبر 2016 (07:35)
0

کنٹرول لائن کے دونوں اطراف اور دنیا بھر میں مقیم کشمیریوں نے جمعرات کو یوم سیاہ منایا جس کامقصد عالمی برادری کو یہ پیغام دیناتھاکہ جموںوکشمیر پر بھارت کا تسلط مکمل طورپر غیر قانونی ، غیر منصفانہ اور کشمیریوں کی خواہشات کے برخلاف ہے ۔
1947میں آج کے دن بھارت نے اپنی فوجیں اتارکر برصغیر کی تقسیم کے منصوبے کی کھلم کھلاخلاف وزی کرتے ہوئے کشمیریوں کی خواہشات کے خلاف جموں و کشمیرپرقبضہ کر لیا تھا۔
مقبوضہ کشمیرمیں آج مکمل ہڑتال کی گئی جس کی کال سید علی گیلانی ، میر واعظ عمرفاروق اور محمد یاسین ملک پر مشتمل مشترکہ حریت قیادت نے دی تھی۔ حریت رہنمائوں نے آج سرینگرمیں میں پہلی مزاحمتی اسمبلی منعقد کرنے کی بھی اپیل کی تھی ۔
قابض انتظامیہ نے سرینگر اور دیگر بڑے قصبوں میں بڑی تعداد میں بھارتی فوج اور پولیس اہلکاروں کو تعینات کرکے سخت پابندیاں عائد کردیں۔ انتظامیہ نے حریت رہنمائوں کو گھروں میں یا پولیس اسٹیشنوں میں مسلسل نظربند رکھا۔ اس کارروائی کا مقصد حریت رہنمائوں اور عوام کو مزاحمتی اسمبلی میں شرکت اور بھارت مخالف مظاہرے کرنے سے روکنا تھا ۔ پابندیوں کے باوجود لوگوں نے سرینگر کے علاقوں بٹہ مالو اور شالیمار میں آزادی کے حق میں مظاہرے کئے۔
ادھر متحدہ مزاحمتی قیادت نے بھارت کے غیر قانونی قبضے، شہریوں کے قتل عام اور دیگر مظالم کے خلاف احتجاجی ہڑتال میں 3نومبر تک توسیع کر دی ہے۔