وفاقی وزیر منصوبہ بندی نے کہا ہے کہ توانائی کے منصوبوں ، گوادر بندرگاہ اور شاہراہوں کا جال بچھانے کے منصوبو پر چھیالیس ارب ڈالر خرچ کئے جارہے ہیں۔

آئندہ سال اقتصادی راہداری کے منصوبوں کی تکمیل کا سال ہوگا:احسن اقبال
27 مارچ 2017 (12:37)
0

منصوبہ بندی کے وزیر احسن اقبال نے کہا ہے کہ ملک کے مستقبل اورترقی سے متعلق اہداف پرمبنی تحقیق وقت کا تقاضا ہے۔وہ آج اسلام آباد میں سی پیک سنٹر آف ایکسی لینس کی افتتاحی تقریب سے خطاب کررہے تھے۔
وفاقی وزیر نے کہا کہ چین پاکستان اقتصادی راہداری امن کی راہداری ہے اور یہ مرکز اس منصوبے پر عملدرآمد میں مصروف عمل اداروں کو مربوط بنائے گا۔
انہوں نے کہا کہ اس مرکز کا مقصد چین پاکستان اقتصادی راہداری کے چھ اہم شعبوں میں تحقیق کوفروغ دینا ہے جن میں منصوبے کے سماجی و اقتصادی اثرات، تجارتی اور صنعتی ترقی، علاقائی روابط، معاشی استحکام، شہری ترقی اور منصوبے سے پیدا ہونے والے روزگار کے مواقع شامل ہیں۔
احسن اقبال نے کہاکہ 2018 چین پاکستان اقتصادی راہداری کے تحت متعدد منصوبوں کی تکمیل کا سال ہوگا اور ہم مختلف ذرائع سے بجلی پیدا کرکے توانائی کی قلت پر قابو پانے میں کامیاب ہوجائیںگے۔

 سن وی ڈونگ نے کہاکہ چین پاکستان اقتصادی راہداری پاکستان اورچین کے درمیان باہمی احترام، تعاون اورشراکت داری پر مبنی دوستی کی مثال ہے۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے پاکستان میں چین کے سفیر سن وی ڈونگ نے کہاکہ چین پاکستان اقتصادی راہداری پاکستان اورچین کے درمیان باہمی احترام، تعاون اورشراکت داری پر مبنی دوستی کی مثال ہے۔

سن وی ڈونگ نے کہا کہ عالمی مالیاتی ادارے حالیہ برسوں میں پاکستان کی اقتصادی شرح نمو کا اعتراف کررہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ دونو ں ملک چین پاکستان اقتصادی راہداری کی کامیابی کیلئے پرعز م ہیں۔