Wednesday, 20 November 2019, 08:14:34 pm

مزید خبریں

 
آزاد دنیاغلامی کی سیاہ رات کو آزادی کے طلوع آفتاب میں بدلنے کیلئے کشمیریوں کی مدد کرے،صدر آزاد کشمیر
October 27, 2019

File photo

آزاد جموں وکشمیر کے صدرسردار مسعود خان نے آزاد دنیا پر زور دیا ہے کہ وہ غلامی کی سیاہ رات کو آزادی اور اطمینان کے طلوع آفتاب میں بدلنے کیلئے کشمیریوں کی مدد کرے۔

آج مقبوضہ کشمیر پر بھارتی قبضہ کو 72 سال مکمل ہونے پر یوم سیاہ کے موقع پر نشر کئے گئے اپنے پیغام میں انہوں نے کہا کہ عالمی برادری کو تنازعہ کشمیر کو دو ممالک کے درمیان علاقائی تنازعہ قرار دے کر اسے نظر انداز نہیں کرنا چاہئے کیونکہ یہ ڈیڑھ کروڑ سے زائد لوگوں کی آزادی اور حق خودارادیت کا مسئلہ ہے۔آزاد جموں وکشمیر کے صدر نے یاد دلایا کہ سات دہائیوں پہلے منظور کی گئی اقوام متحدہ کی قراردادوں کے تحت کشمیریوں کے حق خودارادیت کوتسلیم کیا گیا۔انہوں نے کہا کہ 27 اکتوبر کشمیر کی تاریخ کا تاریک دن ہے جبکہ آج کے دن 1947 میں بھارت نے اپنی فوج کشمیر میں داخل کی اور ریاست کے وسیع رقبہ پر قبضہ کرلیا تاہم کشمیریوں نے اس جارحیت کو تسلیم کرنے سے انکار کردیا۔سردار مسعود خان نے کہا کہ اس وقت سے اب تک بھارت منظم انداز میں کشمیریوں کا قتل عام اور نسل کشی کررہا ہے اور اس سال پانچ اگست کی تاریک رات تھی جب بھارت نے اپنی نو لاکھ فوج کے ذریعے مقبوضہ وادی پر ہلا بول دیا ، پوری آبادی کو محاصرے میں لے لیا اور ریاست کی علیحدہ شناخت ختم کردی۔انہوں نے کہا کہ کشمیر پر غیر قانونی قبضہ کی مزاحمت کرنے والوں کو قتل ،زخمی اور قید کیا جاتا ہے ، خواتین کی بے حرمتی کی جارہی ہے جبکہ پوری سیاسی قیادت جیل میں ہے۔انہوں نے کہا کہ چھ اگست سے تیرہ ہزار سے زائد نوجوانوں کو گرفتار کرکے بدنام زمانہ جیلوں میں قید کردیا گیا ہے۔آزاد جموں وکشمیر کے صدر نے کہا کہ سال 2019ء خصوصاً آزاد کشمیر کے لوگوں کیلئے بھی بدترین سال ہے کیونکہ بھارتی فوجیوں نے جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے کنٹرول لائن کے پار سے فائرنگ اور گولہ باری کی اور پچاس سے زائد افراد کو شہید اور اڑھائی سو سے زائد شہریوں کو معذور کرنے کے علاوہ املاک کو ناقابل تلافی نقصان پہنچایا۔انہوں نے کہا کہ بھارتی فوج بین الاقوامی قانون کی خلاف ورزی کرتے ہوئے بے گناہ بچوں اور شہریوں کو قتل کرنے اور اپاہج بنانے کیلئے کلسٹر بم استعمال کرتی ہے۔آزاد جموں وکشمیر کے صدر نے خبردار کیا کہ اگر مسئلہ کشمیر کو کشمیری عوام کی خواہشات کے مطابق حل نہ کیا گیا اور عالمی برادری نے بھارت کے جنگی جنون کا نوٹس نہ لیا تو خطے میں جنگ کو کوئی نہیں ٹال سکتا۔