Monday, 22 April 2019, 11:23:42 am
وفاقی کابینہ نے شہری ہوا بازی کی نئی پالیسی کی منظوری دے دی
March 26, 2019

وفاقی کابینہ نے ملک میں سیاحت اور ہوابازی کی صنعت کے فروغ کے لئے شہری ہوابازی کی نئی پالیسی کی منظوری دی ہے۔ منگل کے روز اسلام آباد میں وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کے اجلاس میں کئے گئے فیصلوں کے بارے میں صحافیوں کو بریفنگ دیتے ہوئے وزیراطلاعات فواد چوہدری نے کہا کہ پاکستان کے سیاحتی مقامات تک سفر کے اخراجات میں کمی اور سہولتیں بڑھا کر سیاحوں کی حوصلہ افزائی کی جائیگی۔انہوں نے کہا کہ سیاحت کے فروغ کے لئے سفر کے اخراجات میں کمی اور ٹیکسوں میں چار ارب روپے کی چھوٹ دی جائے گی اورمقامی پروازوں کے ذریعے فضائی سفر پر کوئی ٹیکس عائد نہیں ہو گا۔انہوں نے کہا کہ کابینہ نے ملک میں سیاحتی مقامات کیلئے ہیلی کاپٹر اور چالیس نشستوں والے طیاروں پر مشتمل سروس شروع کرنے پر بھی غور کیا۔اور اب غیرملکیوں کو ملک میں کہیں بھی آنے جانے کے لئے این او سی کی ضرورت نہیں ہو گی۔فواد چوہدری نے کہا کہ کابینہ نے تمام بین الاقوامی فضائی کمپنیوں کیساتھ معاہدوں پر نظرثانی کا فیصلہ کیا ہے۔انہوں نے کہا کہ خواتین پائلٹوں کی حوصلہ افزائی کی جائے گی اور محکمہ شہری ہوابازی اس مقصد کے لئے فیس میں چار لاکھ روپے تک کی مدد دے گی۔ انہوں نے کہا کہ پائلٹوں کے لائسنسوں کی مدت بڑھا کر پانچ سال کر دی گئی ہے۔وزیر اطلاعات نے کہا کہ سیاحت کے فروغ کیلئے وزیراعظم کے ویژن کے تحت ویزہ پالیسی میں پہلے ہی تبدیلی کر دی گئی ہے۔انہوں نے کہا کہ اب پانچ ملکوں  چین، متحدہ عرب امارات، ترکی، ملائیشیا اور برطانیہ کیلئے ای ویزے کی سہولت فراہم کی جا رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ اٹھاون ملکوں کے شہری اپنی آمد پر ویزہ حاصل کر سکتے ہیںجبکہ ایک سو ستر دیگر ملکوں کے شہریوں کو ای ویزہ کی سہولت فراہم کی جائیگی۔فواد چوہدری نے کہا کہ کابینہ نے عوام کو رمضان المبارک کے دوران ریلیف فراہم کرنے کیلئے دو ارب روپے کے رمضان پیکج کی بھی منظوری دی۔ وزیر اطلاعات نے کہا کہ کابینہ نے منقسم خاندانوں کو سہولت فراہم کرنے کے لئے لاہور دلی بس سروس میں مزید پانچ سال کی توسیع کا بھی فیصلہ کیا۔کرتارپور راہداری کے بارے میں وفاقی وزیر نے صحافیوں کو بتایا کہ سکھ برادری کو کرتارپور مزار تک سفر میں سہولت دینے کیلئے اس سال نومبر میں راہداری کھولی جائے گی۔انہوں نے کہا کہ مطلوبہ انتظامات یقینی بنانے اور سکھ یاتریوں کو سہولت فراہم کرنے کیلئے ایک نئی دس رکنی پاکستان گوردوارہ پر بندھک کمیٹی قائم کر دی گئی ہے۔آزادکشمیر میں شاردا مندر کھولنے سے متعلق ایک سوال پر وفاقی وزیر نے کہا کہ ہم اس حوالے سے بھارت کی درخواست کا انتظار کریں گے۔نوازشریف کو طبی بنیادوں پر سپریم کورٹ کی طرف سے دی جانیوالی چھ ہفتوں کی ضمانت پر تبصرہ کرتے ہوئے وفاقی وزیر نے کہا کہ حکومت عدالت عظمیٰ کے فیصلے کا احترام کرتی ہے۔ وفاقی وزیر نے ضمانت کے دوران نوازشریف کو بیرون ملک جانے کی اجازت نہ دینے کے فیصلے کا خیرمقدم کیا۔تاہم انہوں نے کہا کہ حکومت نوازشریف کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ میں شامل کرنے کے معاملے کا جائزہ لے گی۔انہوں نے کہا کہ حکومت نوازشریف کو ان کے مطالبے اور اطمینان کے مطابق علاج کی بہترین سہولیات فراہم کرنے کی یقین دہانی کرا چکی ہے۔وفاقی وزیر نے کہا کہ شہباز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کے فیصلے کو ہائیکورٹ میں چیلنج کیا جائے گا اور فوجی عدالتوں کے مسئلے پر حزب اختلاف کے ساتھ اتفاق رائے پیدا کیا جائے گا۔ایک سوال کے جواب میں فواد چوہدری نے کہا کہ حکومت ہر مسئلے پر حزب اختلاف کے ساتھ مل بیٹھنے کے لئے تیار ہے۔ تاہم وہ احتساب کے مسئلے پر کوئی سمجھوتہ نہیں کرے گی کیونکہ تحریک انصاف نے انسداد بدعنوانی کے نعرے پر انتخابات میں حصہ لیا تھا۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ کابینہ نے اسلام آباد میں بلند و بالا عمارتوں پر پابندی اٹھانے کا بھی فیصلہ کیا اور جو ٹھیکیدار وفاقی دارالحکومت میں بلند عمارتیں تعمیر کرنا چاہتے ہیں انہیں سی ڈی اے یا محکمہ شہری ہوا بازی سے اجازت نامہ لینے کی ضرورت نہیں ہوگی۔