وزیر خزانہ نے کہاکہ آئندہ مالی سال کیلئے ترقی کی شرح کا ہدف6 فیصد مقرر کیاگیا ہے۔

ملکی معیشت کا حجم3سو ارب ڈالرزکی سطح عبور کر گیا،ڈار
25 مئی 2017 (18:35)
0

ختم ہونے والی مالی سال کے دوران پاکستان کی معیشت کا حجم تین سو ارب ڈالرز کی سطح کو عبور کرگیا ہے۔

یہ بات وزیرخزانہ اسحق ڈار نے جمعرات کے روز اسلام آباد میں 2016-17ء کا اقتصادی سروے جاری کرتے ہوئے بتائی۔
وزیرخزانہ نے صحافیوں کو مختلف شعبوں کی کارکردگی کے بارے میں بریفنگ دیتے ہوئے کہاکہ مجموعی اقتصادی ترقی کی شرح پانچ اعشاریہ دوآٹھ فیصد رہی جو گزشتہ دس برسوں میں بلند ترین ہے ۔
انہوں نے کہاکہ مجموعی ملکی پیداوار میں صنعتی شعبے کا حصہ اکیس فیصد ، زراعت کابیس فیصداورخدمات کا ساٹھ فیصد رہا۔
اسحق ڈار نے کہاکہ زرعی شعبے کی ترقی تین اعشاریہ چار چھ فیصد، خدمات کی پانچ اعشاریہ نو آٹھ فیصد جبکہ صنعتوں کی شرح ترقی پانچ اعشاریہ صفر دو فیصد رہی۔
انہوں نے کہاکہ آئندہ مالی سال کیلئے ترقی کی شرح کا ہدف چھ فیصد مقرر کیاگیا ہے۔
صنعتی ترقی کے حوالے سے اسحق ڈار نے کہاکہ مینوفیکجرنگ کا شعبہ مثبت سمت میں گامزن ہے جبکہ تعمیراتی صنعتوں میں ختم ہونے والے مالی سال کے دوران ترقی کی شرح نو اعشاریہ صفر پانچ فیصد رہی۔
وزیرخزانہ نے زرعی شعبے کے حوالے سے کہاکہ گزشتہ سال اس کی ترقی کی شرح صفر اعشاریہ دوسات فیصد رہی تین سواکتالیس ارب روپے مالیت کے کسان پیکج سے حاصل ہونیو الے ثمرات کی بدولت اس سال اس شعبے کی ترقی کی شرح تین اعشاریہ چار چھ فیصد تک پہنچ گئی انہوں نے کہاکہ کسان پیکج کے تحت کھادسمیت زرعی اجناس پراعانت دی گئی۔
اسحق ڈار نے کہاکہ اس عرصے کے دوران مختلف اہم فصلوں کی پیداوار میں اضافہ ہوا ۔
زرعی قرضے کے بارے میں انہوں نے یقین ظاہر کیاکہ یہ شعبہ اس اسال سات سو ار ب ڈالر کا ہدف حاصل کرے گا۔
وزیرخزانہ نے کہاکہ صارفین کیلئے قیمتوں کے اشاریے کے مطابق 2013-14 میں افراط زر کی شرح آٹھ اعشاریہ چھ نو فیصد تھی اور حکومت کے اقدامات کی بدولت موجودہ مالی سال میں یہ شرح چاراعشاریہ صفر نو فیصد پر رہنے کی توقع ہے۔
انہوں نے کہاکہ برآمدات کا شعبہ باعث تشویش ہے اور حکومت اس پر توجہ دے رہی ہے انہوں نے کہاکہ موجودہ مالی سال کے پہلے دس ماہ میں برآمدات کاحجم سترہ ارب اکانوے کروڑ ڈالر رہا ۔
انہوں نے کہاکہ توقع ہے کہ برآمدات اکیس ارب چھہتر کروڑ ڈالر کی سطح تک پہنچ جائیںگی انہوں نے کہاکہ برآمدات کیلئے دئیے گئے پیکج پر عملدرآمد شروع ہوگیا ہے اور آئندہ مالی سال کے دوران بھی یہ عمل جاری رہے گا ۔
انہوں نے کہاکہ موجودہ مالی سال کے پہلے دس ماہ کے دوران ملک کی درآمدات میں سینتیس ارب چالیس کروڑ ڈالر کا اضافہ ہوا جو گزشتہ سال کے اسی عرصے میں تینتیس ارب چوالیس کروڑ ڈالر تھیں سال کے آخر تک درآمدات کا حجم پینتالیس ارب اڑتالیس کروڑ ڈالر تک پہنچ جائے گا۔
وزیرخزانہ نے کہاکہ اس مالی سال میں حسابات جاریہ کا خسارہ آٹھ اعشاریہ تین فیصد تک رہنے کی توقع ہے ۔
انہوں نے کہاکہ اس سال ترسیلات زر انیس اعشاریہ پانچ فیصد کی سطح تک جائیںگی جن میں دو اعشاریہ چھ فیصد کمی ہوئی ہے ۔
انہوں نے کہاکہ اس سال کے پہلے دس ماہ کے دوران غیرملکی براہ راست سرمایہ کاری کاحجم بڑھ کر ایک ارب تہتر کروڑ ڈالر ہوگیا جو گزشتہ سال کی اسی مدت کے دوران اسی کروڑ ستر لاکھ ڈالرز تھا انہوں نے کہاکہ توقع ہے کہ یہ حجم دو ارب اٹھاون کروڑ ڈالرز کی سطح پر پہنچ جائے گا انہوں نے کہاکہ اس وقت زرمبادلہ کے ذخائر بیس ارب ڈالرز کے قریب ہیں۔