منصوبہ بندی اورترقی کےوزیرنےمتعلقہ وزارتوں کو ہدایت کی کہ راہداری کے منصوبوں کے ناگزیر مسائل سے نمٹنے کیلئے اپنی تجاویز کو پانچ دن میں حتمی شکل دیں۔

اقتصادی راہداری کےمنصوبوں کی تیزترتکمیل کیلئےجامع حکمت عملی مرتب کی جارہی ہے
24 اپریل 2015 (10:27)
0

منصوبہ بندی اور ترقی کے وزیر احسن اقبال نےکہا ہے کہ چین پاکستان اقتصادی راہداری کے منصوبوں کی موثر اور تیز تر تکمیل کو یقینی بنانے کیلئے جامع حکمت عملی مرتب کی جارہی ہے۔اسلام آباد میں اس حوالے سے ایک اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے انہوں نے متعلقہ وزارتوں کو ہدایت کی کہ راہداری کے منصوبوں کے ناگزیر مسائل سے نمٹنے کیلئے اپنی تجاویز کو پانچ دن میں حتمی شکل دیں۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ اقتصادی راہداری کے منصوبوں پر عملدرآمد کیلئے جامع اور مربوط حکمت عملی کا منصوبہ وزیراعظم کو پیش کیا جائے گا تاکہ مستقبل میں کسی بھی تضاد سے بچا جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ جانچ پڑتال اور نگرانی کے لئے حکمت عملی مرتب کی جارہی ہے جس سے منصوبوں کے بارے میں اعلیٰ سطح پر وزیراعظم اور منصوبے کی جگہ پر اس کی نگرانی میں ذاتی دلچسپی کی عکاس ہوتی ہے۔


احسن اقبال نے کہا کہ پاک چین اقتصادی راہداری کے لئے مشترکہ ورکنگ گروپ جلد تشکیل دے دیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ گروپ صنعتی پارکوں اور اقتصادی زونز کے قیام کیلئے تمام صوبوں سے مشاورت کرے گا۔انہوں نے کہا کہ راہداری کے منصوبے کے بارے میں عوام کو متعلقہ معلومات کی فراہمی کیلئے ایک آزادانہ ویب سائٹ بھی تیار کی جارہی ہے۔


وفاقی وزیر نے بھارتی ذرائع ابلاغ اورکچھ سیاسی حلقوں کی طرف سے اس حوالے سے منفی تاثرات کی سخت مذمت کی ۔انہوں نے تمام سیاسی جماعتوں اور سول سوسائٹی سے کہا کہ وہ پاک چین اقتصادی راہداری کے منصوبے کے بارے میں تمام اندرونی اور بیرونی سازشوں کے خلاف مشترکہ سوچ کا مظاہرہ کریں۔احسن اقبال نے توقع ظاہر کی کہ چین پاکستان اقتصادی راہداری کے منصوبوں سے ملک کے تمام علاقوں کے عوام کو فائدہ ہوگا۔