دن کا آغاز وفاقی دارالحکومت میں 31 اور صوبائی دارالحکومتوں میں اکیس اکیس توپوں کی سلامی سے ہوا۔

یوم پاکستان ملک کی سلامتی کے تحفظ کے عزم کے ساتھ منایا گیا
23 مارچ 2015 (18:05)
0

یوم پاکستان پیر کو ملک کی سلامتی اور دفاع کے تحفظ کے عزم کے ساتھ منایا گیا۔  دن کا آغاز وفاقی دارالحکومت میں 31 اور صوبائی دارالحکومتوں میں اکیس اکیس توپوں کی سلامی سے ہوا۔ نماز فجر کے بعد ملکی ترقی اوراستحکام کیلئے خصوصی دعائیں کی گئیں۔ آج عام تعطیل ہے اور تمام اہم سرکاری و نجی عمارتوں پر قومی پرچم لہرا رہا ہے۔روایتی فوجی پریڈ تقریبات کا اہم حصہ تھی۔


پریڈ کا انعقاد سات سال کے وقفے کے بعد شکرپڑیاں کے قریب نئے تیار کیے گئے پریڈ گرائونڈ میں کیا گیا۔  صدر مملکت ممنون حسین اس موقعے پر مہمان خصوصی تھے جنہوں نے فوجی دستوں سے سلامی لی اور تقریب کے شرکاء سے خطاب بھی کیا۔  وزیر اعظم محمد نوازشریف' وزیر دفاع خواجہ محمد آصف ' چیئرمین جائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی جنرل راشد محمود اور تینوں افواج کے سربراہ بھی تقریب میں شریک تھے۔


پریڈ کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے صدرمملکت ممنون حسین نے کہاکہ پاکستان کو محفوظ' پرامن اور خوشحال ملک بنانے کیلئے اسے دہشت گردی ' عسکریت پسندی ' نسلی اور فرقہ وارانہ تعصبات سے پاک کیا جائے گا۔  انہوں نے کہا کہ ہماری منزل پاکستان کو ایسا ملک بنانا ہے جو تمام برائیوں سے پاک ہو اور جہاں لوگ اپنی مرضی کی زندگی گزار سکیں۔ ممنون حسین نے کہا کہ یوم پاکستان کی پریڈ ہمیں اپنے اسلاف کو خراج عقیدت پیش کرنے کا نادر موقع فراہم کرتی ہے جنہوں نے مادر وطن کے قیام کیلئے انتھک جدوجہد کی۔


شہداء کوخراج عقیدت پیش کرتے ہوئے صدرمملکت نے کہا کہ قوم کو اپنے ان بیٹوں پر فخر ہے جنہوں نے ملک کیلئے اپنی جانیں قربان کیں اور پاکستان کو جوہری قوت بنایا۔ صدر ممنون حسین نے کہا کہ حکومت نے درست اہداف مقرر کیے ہیں اور عوام کی بہبود کیلئے انتھک کوششیں کررہی ہے۔

آپریشن ضرب عضب کا ذکر کرتے ہوئے ممنون حسین نے کہا کہ ہماری مسلح افواج کے جوان تاریخ کی اس مشکل ترین جنگ میں اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پشاور سکول حملے کے شہداء بھی ہماری طرف سے خراج تحسین کے مستحق ہیں کیونکہ انہوں نے اپنی قربانیوں سے دشمن پر واضح کر دیا کہ اس قوم کو شکست نہیں دی جاسکتی۔


انہوں نے کہا کہ انسداد دہشت گردی کے قومی لائحہ عمل پر معاشرے کے تمام طبقات کے درمیان اتفاق رائے انتہائی قابل تحسین اقدام ہے جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ دہشت گردی کاجلد خاتمہ کردیا جائے گا۔  صدر مملکت نے کہا کہ پاکستان بھارت سمیت تمام ہمسایہ ممالک کے ساتھ برابری کی سطح پر پرامن اور دوستانہ تعلقات چاہتاہے انہوں نے کہاکہ پاکستان مسئلہ کشمیر سمیت بھارت کے ساتھ تمام تصفیہ طلب مسائل حل کرنے کا خواہشمند ہے انہوں نے کہا کہ مسئلہ کشمیر کو کشمیریوں کی خواہشات اور اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق حل کیا جانا چاہیے۔
ممنون حسین نے کہا کہ پاکستان کے افغانستان کے ساتھ تاریخی ' مذہبی اور ثقافتی تعلقات ہیں۔

 

صدر نے کہا کہ ہماری فوج جنگ زدہ علاقوں میں اقوام متحدہ کے امن مشنوں میں اہم کردار ادا کررہی ہے۔  انہوں نے واضح کیا کہ پاکستان عالمی امن اور سلامتی میں اپنا کردار اداکرتا رہے گا۔  انہوں نے اقوام متحدہ کی طرف سے پاکستان کی سمندری حدود میں ساڑھے تین سو ناٹیکل میل اضافے کو عظیم کامیابی قرار دیا اور کہا کہ اس سے ملک کے قدرتی وسائل میں مزید اضافہ ہوگا۔


یوم پاکستان کی رنگا رنگ تقریب پاک فضائیہ کے سربراہ سہیل امان کی قیادت میں پاک فضائیہ اور پاک بحریہ کے طیاروں کے شاندارفضائی مظاہرے کے ساتھ شروع ہوئیں۔  پاک فوج اور پاک بحریہ کے ہیلی کاپٹروں نے فضائی مظاہرہ پیش کیا۔  سپیشل سروسزگروپ کے جوانوں نے پیراٹروپنگ کا شاندار مظاہرہ کیا ' سپیشل سروسز گروپ کے چھاتہ برداروں نے قومی جھنڈا لہراتے ہوئے دس ہزار فٹ کی بلندی سے چھلانگ لگانے کا مسحور کن مظاہرہ پیش کیا۔


JF-17 تھنڈر سمیت پاک فضائیہ کے طیاروں نے فضائی مہارت کے ولولہ انگیز کرتب پیش کیے جس پر سامعین نے تالیاں بجاکر ان کو داد دی ' مختلف سکولوں کے طلباء نے ملی نغمے پیش کیے جس کے بعد یہ تقریب ختم ہوگئی۔  ایف سولہ ' جے ایف سترہ' میراج ' ایف سیون' پی جی اور پی تھری سی اورین نے سلامی کے چبوترے پر پرواز کرتے ہوئے مہمان خصوصی کو سلامی پیش کی' پاک فوج' پاک بحریہ اور پاک فضائیہ کی مختلف رجمنٹوں نے سلامی کے چبوترے کے سامنے مارچ پاسٹ کرتے ہوئے صدر کو سلامی پیش کی۔


پریڈ میں ٹینک ' راکٹ لانچرز اور مقامی طور پر تیار کردہ کم اور طویل فاصلے تک مار کرنے والے میزائل نصر ' بابر ' شاہین ون' شاہین ٹو ' ریڈارزاور بغیر پائلٹ کے اڑانے والے جہازبراق سمیت جدید ہتھیار نمائش کیلئے پیش کیے گئے۔ پریڈ میں Floats بھی پیش کیے گئے جنہوں نے چاروں صوبوں' آزاد کشمیر اور گلگت بلتستان کی ثقافت کو اُجاگر کیا۔