ترجمان دفترخارجہ نے کہا کہ 1974ء کے معاہدے کے تحت بنگلہ دیش کو مفاہمت کی ضرورت ہے۔

پاکستان کا بنگلہ دیش میں پھانسیوں پر اظہار تشویش
22 نومبر 2015 (18:06)
0

انہوں نے کہا کہ 9 اپریل 1974 کو پاکستان بھارت اور بنگلہ دیش کے درمیان کئے گئے معاہدے کے مطابق بنگلہ دیش کو مفاہمت کی ضرورت ہے۔
پاکستان نے بنگلہ دیش نیشنل پارٹی کے رہنمائوں صلاح الدین قادر چوہدری اور علی احسن مجاہد کو پھانسی دینے پر گہری تشویش اورغم و غصے کا اظہار کیا ہے۔
دفتر خارجہ کے ترجمان نے ایک بیان میں کہا کہ پاکستان کو اس واقعے سے شدید صدمہ پہنچا ہے۔
ترجمان نے کہا کہ پاکستان 1971 کے سانحہ کے تناظر میں بنگلہ دیش میں جاری متعصب عدالتی کارروائی سے متعلق عالمی برادری کے ردعمل کو بھی دیکھ رہا ہے۔
انہوں نے کہا کہ 9 اپریل 1974 کو پاکستان بھارت اور بنگلہ دیش کے درمیان کئے گئے معاہدے کے مطابق بنگلہ دیش کو مفاہمت کی ضرورت ہے۔اس معاہدے میں 1971 کے سانحے کو بھلا کر آگے بڑھنے کی سوچ اپنانے پرزوردیاگیا ہے انہوں نے کہا کہ اس سے خیرسگالی اورہم آہنگی کو فروغ ملے گا۔

جماعت اسلامی نے بنگلہ دیش کی جیل میں علی احسن مجاہد کو پھانسی دیئے جانے پرگہری تشویش ظاہر کی ہے۔
جماعت اسلامی کے امیر سراج الحق نے ایک بیان میں کہاکہ انہیں پاک فوج اور نظریہ پاکستان کے ساتھ وفاداری کے جرم میں پھانسی دی گئی۔
انہوں نے وزیراعظم محمد نوازشریف اور بری فوج کے سربراہ جنرل راحیل شریف سے کہا کہ وہ ان کی پھانسی کا نوٹس لیں۔