میرحاصل بزنجو نے کہا کہ دہشتگردی پر قابو پانے کیلئے تمام سیاسی جماعتوں کو انتہا پسندانہ رجحانات کی حوصلہ شکنی کرنا ہوگی ۔

 سانحہ پشاور:سینیٹ کادہشت گردوں کو قرار واقعی سزا دینے کا مطالبہ
22 دسمبر 2014 (20:25)
0

سینٹ نے پشاور میں دہشتگردی کے حالیہ واقعے پر بحث پھر شروع کی ۔
حاجی محمد عدیل نے بحث میں حصہ لیتے ہوئے وزیراعظم اور بری فوج کے سربراہ پر زوردیا کہ دہشتگردی کے خاتمے کیلئے فیصلہ کن پالیسی تشکیل دی جائے ۔
میر حاصل بزنجو نے کہا کہ اگر پاکستان اور افغانستان کی حکومتیں اور سیاسی جماعتوں کا موقف ایک نہیں ہوگا تو ہم یہ جنگ نہیں جیت سکتے ۔
اُنہوں نے کہا کہ دہشتگردی پر قابو پانے کیلئے تمام سیاسی جماعتوں کو انتہا پسندانہ رحجانات کی حوصلہ شکنی کرنا ہوگی ۔
بحث میں حصہ لیتے ہوئے پوسٹل سروسز کے وزیرمملکت مولانا عبدالغفور حیدری نے کہا کہ جن دہشتگردوں نے معصوم بچوںکو شہید کیا وہ انسان نہیں ہیں ۔
اُنہوں نے کہا کہ دہشتگردی کے خطرات سے نمٹنے کیلئے حکومت کو نئی پالیسی نافذ کرنی چاہیئے ۔
طاہر حسین مشہدی نے اس وحشیانہ کارروائی میںملوث مجرموں کو سرعام پھانسی دینے کا مطالبہ کیا۔ اُنہوں نے کہا کہ دہشتگرد کارروائیاں انجام دینے اور ہمارے بچوں کو نشانہ بنانے والے دہشتگردوں کو تربیت دینے میں مٹھی بھر انتہا پسند اور ان کے آلہ کار ملوث ہیں ۔ اُنہوں نے حکومت سے مدارس سمیت تمام سکولوں میں یکساں نصاب رائج کرنے کا مطالبہ کیا۔
فرحت اللہ بابرنے کہا کہ اس سانحے نے تمام سیاسی قوتوںکو ایک پلیٹ فارم پر متحد کردیاہے ۔ اُنہوں نے کہا اس اتحاد کا سہرا شہید بچوں کے سر ہے ۔ اُنہوں نے کہا یہ پہلی مرتبہ نہیں ہے کہ ایسا واقعہ ہوا ہے ۔ اُنہوں نے دہشتگردوں کو سخت سزا دینے کا مطالبہ کیا۔ اُنہوں نے مطالبہ کیا کہ شدت پسند ذہنیت کو شکست دینے کیلئے طویل المدت حکمت عملی وضع کی جائے ۔ اُنہوں نے کہا ہمارا دشمن ہمارے اندر ہے جو ملک کو تباہ کرنا چاہتا ہے ۔ اُنہوں نے کہا ہمیں ان کے آلہ کاروں کو بے نقاب کرنے کی ضرورت ہے ۔
ڈاکٹر عبدالقیوم سومرو نے کہا کہ ہمیں عسکریت پسندی اور دہشتگردی کے معاونین کے خلاف بلاامتیاز کارروائی کرنا ہوگی ۔
اُنہوں نے کہا مذہب کسی انسان کو قتل کرنے کی اجازت نہیں دیتا۔اُنہوں نے کہا ملک دشمنوں کو معلوم ہونا چاہیئے کہ پوری قوم اور تمام سیاسی جماعتیں دہشتگردی کے خلاف جنگ میںمسلح افواج کے ساتھ کھڑی ہیں۔

ایوان نے سابق سینیٹر خالد محمود سومرو کے قتل کی مذمتی قرارداد متفقہ طور پر منظور کی ۔ قرارداد میں اس کارروائی کو امن اور قوم کی سا لمیت پر حملہ قراردیاگیا۔
یہ قرارداد ڈاکٹر عبدالقیوم سومرونے پیش کی تھی ۔

ایوان کا اجلاس کل صبح ساڑھے دس بجے پھر ہوگا۔