قومی تحفظ خوراک اور تحقیق کے وزیر سکندر حیات بوسن نے کہا کہ پاکستان گندم کے حوالے سے خودکفیل ملک ہے۔

کاشتکار، پیداوار بڑھانے کیلئے جدید ٹیکنالوجی کو بروئے کار لائیں:بوسن
22 دسمبر 2014 (15:49)
0

قومی تحفظ خوراک اور تحقیق کے وزیر سکندر حیات بوسن نے زرعی سائنسدانوں اور کاشتکاروں پر زور دیا ہے کہ وہ ملک میں زرعی پیداوار بڑھانے کیلئے جدید ٹیکنالوجی کو بروئے کار لائیں اور انتظامی اقدامات کریں۔


وہ پیر کے روز اسلام آباد میں نوبل انعام یافتہ اور سبز انقلاب کے بانی ڈاکٹر Norman Borlaug کے سوویں یوم پیدائش کے موقع پر یادگاری ڈاک ٹکٹ کے اجراء کی تقریب سے خطاب کر رہے تھے۔


اس تقریب کا اہتمام پاکستان زرعی تحقیقاتی کونسل نے امریکہ کے محکمہ زراعت اور انٹرنیشنل Maize اینڈ Wheat امپرومنٹ سینٹر کے تعاون سے کیا۔ وفاقی وزیر نے کہا کہ زرعی سائنسدانوں ، کاشتکاروں اور ذرائع ابلاغ کی مضبوط کوششوں سے ہم قومی تحفظ خوراک کے چیلنجوں سے عہدہ براء ہو سکتے ہیں۔


انہوں نے کہا کہ پاکستان اس وقت سالانہ ڈھائی کروڑ ٹن گندم پیدا کر رہا ہے اور ہم بہترین انتظامی اقدامات کے ذریعے اسے آسانی کے ساتھ تین کروڑ ٹن تک بڑھا سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان گندم کے حوالے سے خودکفیل ملک ہے اور ہم گندم برآمد کرنے پر غور کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کاشتکاروں کو سہولتیں فراہم کرنے کیلئے ہرممکن کوششیں کر رہی ہے اور اس ضمن میں مختلف پروگرام شروع کئے گئے ہیں۔