Friday, 28 February 2020, 11:11:12 pm
پاکستان اورامریکہ افغان مسئلے کو مذاکرات کے ذریعے حل کرنے پر متفق ہیں، وزیراعظم
January 22, 2020

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ افغانستان کا مسئلہ مذاکرات سے حل کرنے کے معاملے پر پاکستان اورامریکہ کا یکساں موقف ہے ۔

انہوں نے سوئٹزرلینڈ کے شہر ڈیووس میں بین الاقوامی میڈیا کونسل سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ افغانستان کی صورتحال سے پاکستان ہمیشہ متاثر ہوا ہے اور جنگ سے تباہ حال ملک میں طویل المدت خوشحالی صرف امن کے ذریعے آسکتی ہے۔

عمران خان نے افغانستان کے پیچیدہ مسئلے کے حل کیلئے طالبان کے ساتھ مذاکرات ٹرمپ انتظامیہ کی پالیسی کو سراہا۔

انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہاکہ جب ان کی حکومت اقتدار میں آئی تو انہوں نے دوطرفہ تعلقات بہتر بنانے کیلئے بھارت سے فوری رابطہ کیا کیونکہ وہ اس بات پر پختہ یقین رکھتے ہیں کہ تنازعات کا حل مذاکرات سے ہی ہے ۔

تاہم وزیراعظم نے اس امر پر افسوس ظاہر کیا کہ بھارت نے پلوامہ واقعے کے بعد پاکستان کے خلاف معاندانہ رویے اور جارحیت پر اتر آیا انہوں نے کہاکہ بھارتی وزیراعظم نریندرمودی نے اپنی دوسری مدت میں کامیابی حاصل کرنے کے بعد مقبوضہ کشمیر کی آزادانہ حیثیت ختم کرکے اس کا یکطرفہ غیرقانونی الحاق کیا ۔

عمران خان نے کہاکہ بھارت نے کشمیریوں کوانسانی حقوق کی لاتعداد خلاف ورزیوں کے ساتھ گزشتہ پانچ ماہ سے یرغمال بنایاہوا ہے۔

انہوں نے پاکستان اور بھارت کے درمیان جنگ کے ایک سوال کے جواب میں دونوں ملکوں کے درمیان ایسے کسی بھی افغان کو مسترد کردیا تاہم انہوں نے تشویش ظاہر کی کہ بھارت پلوامہ جیسے کسی بھی واقعے کی آڑ میں پاکستان میں حملہ کراسکتا ہے۔

وزیراعظم نے امریکہ اور عالمی برادری پرزوردیا کہ وہ صورتحال کانوٹس لیں اور مسئلہ کشمیر حل کرانے میں اپنا کردارادا کریں۔

انہوں نے کشمیر میں حقائق معلوم کرنے والا عالمی مبصرین کامشن بھی وہاں بھیجنے پر زوردیا کیونکہ یہ دونوں ایٹمی ہمسایہ ممالک کے درمیان ایک سلگتا ہوا تنازعہ بن گیا ہے۔