ریٹائرڈ جسٹس خواجہ نوید نے کہاکہ سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں کثرت رائے سے نوازشریف کو وزارت عظمی کی ذمہ داریاں جاری رکھنے کیلئے کہا ہے ۔

وکلا،قانون دانوں نے عدالتی فیصلے کو ملک کیلئے نیک شگون قرار دے دیا
21 اپریل 2017 (20:14)
0

وکلاء اور قانون دانوں نے پانامہ پیپرز مقدمے میں سپریم کورٹ کے فیصلے کو سراہتے ہوئے اسے ملک کے مستقبل کیلئے نیک شگون قراردیا ہے۔

انہوں نے کہاکہ سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں وزیراعظم کو استعفیٰ دینے کیلئے نہیں کہا ہے ۔
معروف ماہرقانون بیرسٹر شاہدہ جمیل نے ریڈیوپاکستان کے کراچی کے نمائندے کے ساتھ ایک انٹرویو میں کہاکہ ملک کی عدالتی تاریخ میں یہ پہلا موقع ہے کہ مدعاعلہیان کو ان پرلگے تمام الزامات سے بریت کیلئے مناسب موقع فراہم کیاگیا ہے ۔
ریٹائرڈ جسٹس خواجہ نوید نے کہاکہ سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں کثرت رائے سے نوازشریف کو وزارت عظمی کی ذمہ داریاں جاری رکھنے کیلئے کہا ہے ۔
سپریم کورٹ کے سینئر وکیل ملک ربنواز نے ریڈیوپاکستان کے سرگودھا کے نمائندے سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پانامہ پیپرز کے مقدمے کافیصلہ قانون کے مطابق ہے ۔
پنجاب بار کونسل کے سابق رکن NOORNUG حیات نے کہا ہے کہ وزیراعظم نوازشریف اوران کے اہل خانہ کیلئے یہ سنہرا موقع ہے کہ وہ خود کو ان الزامات سے بری کرائیں
ایڈووکیٹ سپریم کورٹ اورپاکستان بار کوسل کے رکن مقصود حسین بٹر نے ریڈیوپاکستان فیصل آباد کے نمائندے کو ایک انٹرویو میں کہاکہ زبانی الزامات کی بنیاد پر سپریم کورٹ کے ذریعے وزیراعظم کو نااہل قراردلوانے کیلئے قانون میں کوئی گنجائش نہیں ہے۔
ہائیکورٹ کے ایڈووکیٹ اور پنجاب بار کونسل کے رکن رانا انتظار نے کہاکہ سپریم کورٹ کا فیصلہ پاکستان کی تاریخ کا اہم فیصلہ ہے اورمشترکہ تحقیقاتی ٹیم کی تشکیل بنچ کا دانشمندانہ فیصلہ ہے ۔
سپریم کورٹ بارے کے سینئر وکیل محمد ایوب نے ریڈیوپاکستان کے ایبٹ آباد کے نمائندے کو ایک انٹرویو میں فیصلے کو تاریخی قراردیا اور کہاکہ اس سے ملک میں قانون کی بالادستی یقینی ہوگی ۔
لاڑکانہ ہائی کورٹ کے ڈپٹی اٹارنی جنرل نثار ابڑو نے ریڈیوپاکستان کے لاڑکانہ کے نمائندے سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ سپریم کورٹ میں درخواست گزاروں کی طرف سے پیش کردہ شواہد کی قانون کی نظروں میں کوئی حیثیت نہیں۔