وزیر داخلہ نے کہا کہ عدالت عظمی کا فیصلہ سب کو قبول کرناچاہیے اوراس پرتنقید نہیں ہونی چاہیے۔

21 اپریل 2017 (17:43)
0

وزیرداخلہ چوہدری نثار علی خان نے کہا ہے کہ حکومت پانامہ پیپرز مقدمے میں سپریم کورٹ کے فیصلے پر حقیقی معنوں میں عملدرآمد کرے گی۔
جمعہ کی سہ پہر واہ کینٹ میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ عدالت عظمی کا فیصلہ سب کو قبول کرناچاہیے اوراس پرتنقید نہیں ہونی چاہیے۔
انہوں نے افسوس ظاہرکیا کہ لوگ عدالت عظمی کے فیصلے پرعجیب اورغیرمنطقی دلائل دے رہے ہیں۔
چوہدری نثار نے کہا کہ سپریم کورٹ کا فیصلہ اب بھی عدالت میں زیرسماعت ہے کیونکہ مزید تحقیقات کے لئے مشترکہ تحقیقاتی ٹیم تشکیل دی جارہی ہے انہوں نے کہا کہ عدالت اپنا حتمی فیصلہ الزامات نہیں بلکہ ثبوت کی بنیاد پر دے گی انہوں نے کہا کہ تمام پانچ جج صاحبان مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کی تشکیل کے بارے میں متفق تھے۔
وزیرداخلہ نے کہاکہ حزب اختلاف نے کئی بار مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کی تشکیل کامطالبہ کیا ہے تاہم ان میں سے بعض لوگ اب اس پراعتراض کررہے ہیں انہوں نے اس امر پر حیرت ظاہر کی کہ ایک پارٹی کے رہنما جن کا بدعنوانی کا ریکارڈ ضرب المثل ہے بدعنوانی پر وعظ کررہے ہیں۔
ایک سوال کے جواب میں چوہدری نثار نے امید ظاہر کی کہ انھیں آئندہ سوموار یامنگل کو ڈان لیکس کی رپورٹ مل جائے گی اوراس کے بعد وہ وزیراعظم کوپیش کی جائے گی۔