مشیر خارجہ نے کہا کہ پاکستان بارے امریکی ارکان کانگریس کی رائے امریکی پالیسی کی عکاس نہیں۔

file photo

قومی مفاد کا تحفظ خارجہ پالیسی کا بنیادی عنصر ہے:سرتاج
19 جولائی 2016 (20:02)
0

مشیر خارجہ سرتاج عزیز نے کہا ہے کہ قومی مفاد کا تحفظ پاکستان کی خارجہ پالیسی کا بنیادی عنصر ہے۔
انہوں نے منگل کی شام سینیٹ میں ایک پالیسی بیان دیتے ہوئے کہا کہ امریکی ارکان کانگریس کی طرف سے پاکستان کے بارے میں ظاہر کی گئی رائے امریکی پالیسی کی عکاسی نہیں کرتا۔
انہوں نے کہاکہ امریکی کانگریس جیسے قابل احترام فورم میں غیر مناسب زبان کے استعمال سے ایوان اور اس کے ارکان کا وقار مجروح ہوتا ہے۔
انہوں نے کہا کہ پاکستان سمجھتا ہے کہ غیر ملکی امداد دوطرفہ تعلقات میں ایک سرمایہ کاری ہے۔انہوں نے کہا کہ ہم امداد سے تجارت کی طرف جارہے ہیں۔
سرتاج عزیز نے کہا کہ پاکستان کی امداد پر کٹوتی لگانے کی ایک ترمیم امریکی کانگریس میں منظور نہیں ہوسکی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اس کے بجائے صرف تجارت پر توجہ دے رہا ہے۔
انہوں نے کہا کہ امریکی محکمہ خارجہ نے کھلے عام اعتراف کیا ہے کہ پاکستان نے محفوظ ٹھکانے ختم کرنے میں بامقصد پیشرفت کی ہے اور دہشتگردی کے خلاف جنگ میں بھاری قیمت چکائی ہے۔
مشیر نے کہا میرے حالیہ دورے میں سینیٹر جان کیری نے دوٹوک الفاظ میں کہا ہے کہ پاکستان میں صورتحال خاصی بہتر ہوئی ہے۔
سرتاج عزیز نے کہا کہ ہم دوطرفہ تعلقات مضبوط بنانے کیلئے امریکہ سے بھرپور رابطے میں ہیں اور پاکستان مخالف لابی کی کوششیں زائل کررہے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ امریکی کانگریس افغانستان میں استحکام لانے کی امریکی انتظامیہ کی خواہش کے ساتھ ہے اور امریکہ کی کوششوں کے باوجود مسائل کا باقی رہنا باعث تشویش ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ پاکستان اور امریکہ کے درمیان شراکت داری، دوطرفہ رابطوں اور باہمی مفاد کیلئے ایک اہم شعبہ ہے۔