مقبوضہ کشمیر: پلوامہ میں نوجوان لیکچرار دوران حراست شہید
18 اگست 2016 (21:31)
0

مقبوضہ کشمیرمیں بھارتی فوجیوں نے ضلع پلوامہ میں ایک لیکچرار کو دوران حراست شہید کردیا ہے جس سے رواں کشمیر انتفادہ کے دوران شہید ہونیوالے کشمیریوں کی تعداد بڑھ کر 82ہوگئی ہے۔
ادھر قابض انتظامیہ نے لوگوں کوبھارتی فوجیوں اور پولیس اہلکاروں کی طرف سے شہریوں کے جاری قتل عام کے خلاف احتجاجی مظاہروںسے روکنے کیلئے آج مسلسل 41ویں دن بھی پوری وادی کشمیرمیںسخت کرفیو اوردیگرپابندیاں جاری رکھیں۔
انتظامیہ نے حریت رہنمائوں سیدعلی گیلانی، میر واعظ عمر فاروق ، محمد یاسین ملک ، شبیر احمد شاہ اور آغا سید حسن الموسوی الصفوی کواحتجاجی مظاہروں کی قیادت سے روکنے کیلئے گھروں یاتھانوںمیں نظربند رکھا ۔
تاہم سرینگر ، بانڈی پورہ، کپواڑہ، پلوامہ ، شوپیاں اور دیگر علاقوں میں لوگ کرفیو اور پابندیوں کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے سڑکوں پر نکل آئے اورزبردست احتجاجی مظاہرے کئے انہوںنے آزادی اور پاکستان کے حق میں اور بھارت کے خلاف نعرے بلند کئے بھارتی فورسز نے مظاہرین کو منتشر کرنے کیلئے فائرنگ ، پیلٹ گن اور آنسو گیس کا بے دریغ استعمال کیا جس سے متعدد افراد زخمی ہو گئے۔
سید علی گیلانی ، میر واعظ عمر فاروق اور محمد یاسین ملک نے سرینگر میں جاری ایک مشترکہ بیان میں احتجاجی ہڑتال میں 25اگست تک توسیع کر دی۔
انہوں نے بھارتی فوجیوں کی فائرنگ سے شہید ہونے والے چار نوجوانوں کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے کل جمعہ کی نماز ضلع بڈگام کے علاقے آری پانتھن میں ادا کرنے کا بھی اعلان کیا ان نوجوانوں کو بھارتی فوجیوں نے منگل کے روز فائرنگ کر کے شہید کر دیا تھا۔