Friday, 18 October 2019, 10:56:39 am
طورخم بارڈر24 گھنٹے کھلا رہنےسےافغانستان، وسط ایشیائی ممالک کیساتھ تجارت کو فروغ ملےگا،وزیراعظم
September 18, 2019

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پاک افغان طورخم سرحد چوبیس گھنٹے کھلی رہنے سے افغانستان اور وسط ایشیائی ممالک کے ساتھ تجارت میں اضافہ ہو گا۔انہوں نے یہ بات آج پاک افغان سرحد کے طورخم ٹرمینل کو چوبیس گھنٹے کھلا رکھنے کا افتتاح کرتے ہوئے کہی۔طورخم ٹرمینل اب ہفتے کے ساتوں روز چوبیس گھنٹے کھلا رہے گا۔ ضلع خیبرمیں واقع طورخم سرحد اس مہینے کی دو تاریخ سے آزمائشی بنیاد پر چوبیس گھنٹے کیلئے کھولی گئی ہے۔ یہ منصوبہ سولہ ارب روپے کی لاگت سے مکمل کیا گیا ہے۔عمران خان نے کہا کہ افغانستان میں امن سے پورے خطے میں تبدیلی آئے گی کیونکہ اس سے وسطی ایشیائی ملکوں تک بڑے پیمانے پر تجارتی سرگرمیوں کو فروغ ملے گا۔انہوں نے کہا کہ اس ٹرمینل کو 24 گھنٹے کھولنے سے دونوں ملکوں کے درمیان تجارت میں پہلے ہی 50 فیصد اضافہ دیکھا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس سے ہمارے عوام کیلئے روزگار کے بے پناہ مواقع بھی پیدا ہونگے۔آج شام ضلع خیبرمیں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان امن عمل کی بحالی کیلئے بھرپور کوشش کرے گا۔ انہوں نے کہا کہ اگر مذاکرات دوبارہ شروع نہ ہوئے اور طالبان نے انتخابات میں حصہ نہ لیا تو یہ ایک المیہ ہو گا۔وزیراعظم نے کہا کہ وہ پیر کو امریکی صدر ڈونلڈٹرمپ کے ساتھ اپنی ملاقات کے دوران مذاکرات کی بحالی پر زور دینگے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان نے امریکہ اور طالبان کے درمیان مذاکرات میں سہولت فراہم کی ہے۔انہوں نے کہا کہ افغانستان میں امن افغان عوام اور پاکستان کے مفاد میں ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان نے افغانستان کے ساتھ تعلقات بہتر بنانے کی بھرپور کوشش کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ چار دہائیوں سے تباہ حال افغانستان میں امن کی بحالی پاکستان کے مفاد میں ہے۔