پارلیمانی سیکرٹری قومی صحت نے قومی اسمبلی کو بتایا کہ نجی شعبے کے ہسپتالوں میں ٹی بی کے علاج کو باضابطہ بنانے کیلئے سندھ اور خیبرپختونخوا میں قانون سازی کی گئی ہے

ٹی بی کی روک تھام کیلئے سرکاری ہسپتالوں میں تپ دق سے بچائو کے مراکز قائم
16 مئی 2017 (12:50)
0

نیشنل ہیلتھ سروسز کے پارلیمانی سیکرٹری ڈاکٹر درشن نے آج قومی اسمبلی کو بتایا کہ سرکاری ہسپتالوں میں تپ دق کی روک تھام کے مراکز قائم کئے گئے ہیں تاکہ اس مرض پر قابو پایا جاسکے۔آسیہ ناز تنولی اور دوسرے ارکان کے توجہ دلائو نوٹس کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ مراکز ٹی بی کے مریضوں کو ادویات بھی فراہم کرتے ہیں۔

پارلیمانی سیکرٹری نے کہا کہ نجی شعبے کے ہسپتالوں میں ٹی بی کے علاج کو باضابطہ بنانے کیلئے سندھ اور خیبرپختونخوا میں قانون سازی کی گئی ہے پنجاب اور بلوچستان میں بھی اس حوالے سے قوانین کے نفاذ کا عمل جاری ہے۔

بلز
ایوان میں دو بل بھی پیش کئے گئے۔ان میں دارالحکومت اسلام آبا د میں مقامی حکومت کا ترمیمی بل 2017 اور تعزیرات پاکستان ترمیمی بل 2017 شامل ہیں۔

قومی اسمبلی نے آج سینٹ سیکرٹریٹ سروسز بل2017 کی منظوری دے دی ہے یہ بل ساجد مہدی نے پیش کیا۔ ایوان نے پانامہ پیپرز انکوائری بل 2016 کومسترد کردیا۔
اس موقع پر اظہار خیال کرتے ہوئے وزیر قانون زاہدحامد نے کہا کہ حزب اختلاف کی طرف سے تیارکردہ بل اصل میں امتیازی ہے اور یہ وزیراعظم کے خلاف تیار کیاگیا ہے۔انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ پہلے ہی اس مسئلے پر فیصلہ دے چکی ہے۔
انہوں نے کہا کہ پاکستان کمیشن آف انکوائری بل کی دونوں ایوان منظوری دے چکے ہیں جو ان افراد کی تحقیقات کرے گی جن کے نام پانامہ پیپرز میں ہیں ۔

ایوان کا اجلاس کل صبح ساڑھے دس بجے تک ملتوی کردیاگیا۔