ترکی کے صدر نے بغاوت کو غداری قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس بغاوت کی منصوبہ بندی کرنے والے گروپ کے رہنما کو قوم کی عدالت میں جواب دینا ہوگا۔

16 جولائی 2016 (09:38)
0

ترکی کے صدر رجب طیب اردوان نے اعلان کیا ہے کہ فوج کے ایک گروپ کی طرف سے بغاوت کی کوشش عوام کے تعاون سے مکمل طور پر ناکام بنا دی گئی ہے۔قوم سے خطاب میں انہوں نے کہا کہ ملک اور جمہوریت کے خلاف سازش کی گئی انہوں نے کہا کہ یہ ملک کے اتحاد اور یکجہتی کے خلاف سازش تھی۔
ترکی کے صدر نے بغاوت کو غداری قرار دیا اور کہا کہ اس بغاوت کی منصوبہ بندی کرنے والے گروپ کے رہنما کو قوم کی عدالت میں جواب دینا ہوگا۔ترکی کے انٹیلی جنس کے قومی ادارے نے بتایا کہ صدر اردوان کی اپیل پر مختلف شہروں میں ہزاروں لوگوں کے سڑکوں پر نکلنے کی وجہ سے بغاوت کی کوشش ناکام بنا دی گئی ہے۔اس سے پہلے ترکی کی فوج کے بعض گروپوں نے رات بغاوت اور مارشل لاء کا اعلان کیا تھا۔

 حکام نے بتایا ہے کہ رات دارالحکومت انقرہ میں بغاوت کی کوشش کے دوران بیالیس افراد ہلاک ہوئے۔ہلاک ہونے والے سترہ پولیس افسر تھے۔

اُدھر صدر باراک اوبامہ نے بغاوت کی کوششو ں کی مذمت کی گئی ہے اور ترکی کی تمام جماعتوں پر زور دیا ہے کہ وہ ترکی کی منتخب جمہوری حکومت کی حمایت کریں' تحمل کا مظاہرہ کریں اور تشدد اور خونریزی سے گریز کریں۔
یورپی رہنمائوں نے کہا کہ وہ ترکی کی حکومت کی مکمل حمایت کرتے ہیں انہوں نے ملک میں آئین کی فوری بحالی کی ضرورت پر زور دیا ہے۔یورپی کونسل کے صدر اور یورپی کمیشن اور یورپی یونین کے اعلیٰ نمائندوں نے ایک مشترکہ بیان میں کہا ہے کہ یورپی یونین منتخب جمہوری حکومت اور آئین کی بالادستی کی حمایت کرتے ہیں۔