ترجمان دفتر خارجہ نے کہاہے کہ اگر روس کے صدر پاکستان کا دورے کا فیصلہ کریں تو ان کا پرتپاک استقبال کیا جائے گا۔

پاکستان کا بھارت کے ساتھ کشیدگی کے خاتمے کیلئے روس کی ثالثی کی پیش کش کا خیرمقدم
15 جون 2017 (16:20)
0

پاکستان نے کہا ہے کہ وہ اسلام آباد اور نئی دہلی کے درمیان کشیدگی کے خاتمے کیلئے روس کے صدر کی طرف سے ثالثی کی پیشکش کا خیرمقدم کرتا ہے۔یہ بات دفتر خارجہ کے ترجمان نفیس ذکریا نے آج اسلام آباد میں ہفتہ وار نیوز بریفنگ کے دوران کہی۔
انہوں نے کہا کہ بھارتی فوج نے رمضان المبارک کے تقدس کو مکمل طور پر پامال کرتے ہوئے مقبوضہ کشمیر میں وحشیانہ طاقت اور چھروں والی بندوق کے استعمال سے پچیس سے زائدکشمیریوں کو شہید اور دو سو سے زائد کو زخمی کیا۔
انہون نے کہا کہ بھارتی بربریت سے سب سے زیادہ متاثر کشمیری بچے ہوئے ہیں وہ نہ صرف فائرنگ اور چھروں والی بندوق کے استعمال سے براہ راست زخمی ہوئے بلکہ انہوں نے کشمیر میں ہونے والے تمام المناک واقعات کو بھی دیکھا ۔ صرف رواں سال کے دوران سینکڑوں بچوں کو بینائی سے محروم کر دیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی طرف سے ان کی آنکھوں کا یورپ کے کسی بھی ملک میں علاج کرانے کی پیشکش برقرار ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان نے یہ معاملہ جنیوا میں اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل کے حکام کے ساتھ اٹھایا ہے۔ پاکستان نے جنیوا میں انسانی حقوق کونسل کے جاری 35 ویں اجلاس میں کشمیریوں کے حقوق کی خلاف ورزیوں اور بھارتی بربریت کو بھی موثر طور پر اجاگر کیا۔
ترجمان نے کہا کہ قابض فوج نے کشمیریوں کو پاکستان کی کرکٹ ٹیم میں جیت پر خوشی منانے کی سزاء دینے کے لئے لوگوں کی مارپیٹ کی ، دکانوں کی توڑ پھوڑ دی اور سامان لوٹا۔
انہوں نے کہا کہ بھارتی اداروں نے آر ایس ایس اور Abinav Bharat جیسی دہشت گرد تنظیموں کی ملی بھگت سے دہشت گرد حملے کئے اور بے گناہ لوگوں کے خلاف طاقت کے وحشیانہ استعمال کا جواز پیدا کرنے کیلئے ان حملوں کا الزام دوسروں پر لگایا۔
نفیس ذکریا نے اس عزم کااعادہ کیا کہ پاکستان کی حکومت اور عوام کشمیریوں کی جدوجہد کی غیرمتزلزل اخلاقی ، سیاسی اور سفارتی حمایت جاری رکھے گی۔انہوں نے شنگھائی تعاون تنظیم میں پاکستان کی مستقل رکنیت کو خارجہ پالیسی میں ایک سنگ میل اور نمایاں کامیابی قرار دیا۔

ایک اور سوال پر ترجمان نے کہا کہ پاکستان افغانستان میں دیرپا امن چاہتا ہے کیونکہ یہ ہمارے بہترین مفاد میں ہے۔ایک سوال پر نفیس ذکریا نے کہا کہ دہشت گرد تنظیموں کی بڑھتی ہوئی سرگرمیاں نہ صرف پاکستان بلکہ پوری دنیا کے لئے تشویش کا باعث ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس چیلنج کا مقابلہ کرنے کے لئے دنیا کو اتحاد کا مظاہرہ کرنا چاہئیے۔

نفیس ذکریا نے بھارتی حکام کی جانب سے ویزہ ہونے کے باوجود سکھ یاتریوں کو جوڑ میلے کے لئے پاکستان آنے کی اجازت نہ دینے پر افسوس ظاہر کیا۔
ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ پاکستان کے روس کے ساتھ تعلقات مثبت سمت میں آگے بڑھ رہے ہیں اور اگر روس کے صدر ولادی میر پیوٹن پاکستان کا دورے کا فیصلہ کریں تو ان کا پرتپاک استقبال کیا جائے گا۔