مزاحتمی قیادت کی حریت رہنماؤں کی حراست اور بڈگام میں تعزیتی اجلاسوں پر پابندی کی مذمت
15 اپریل 2017 (11:45)
0

مقبوصہ کشمیر میں سید علی گیلانی ، میرواعظ عمر فاروق اور محمد یاسین ملک پر مشتمل مزاحتمی قیادت نے حریت رہنماؤں کی حراست اور بڈگام میں تعزیتی اجلاسوں پر پابندی کی مذمت کی ۔سرینگر میں ایک مشترکہ بیان میں مزاحمتی قیادت نے کہا ہے کہ کٹھ پتلی انتظامیہ پرامن سیاسی سرگرمیوں کے لئے پابندیاں عائد کر رہی ہے۔
انہوں نے کہا کہ صورتحال بد سے بدتر ہو رہی ہے جس کے نتیجے میں مقبوضہ علاقے میں سیاسی غیریقینی صورتحال پیدا ہو رہی ہے۔انہوں نے سرینگر ، گاندربل اور بڈگام کے عوام کو انتخابات کا مثالی بائیکاٹ کرنے پر سراہا۔
مزاحمتی قیادت نے کہا کہ اس سے عالمی برادری کو ایک مضبوط پیغام دیا گیا ہے کہ دس لاکھ بھارتی فوجیوں کی موجودگی میں یہ ڈرامہ قابل قبول نہیں اور نہ ہی یہ کشمیریوں کے حق خودارادیت کا متبادل ہو سکتا ہے۔

ادھر مقبوضہ کشمیر میں آج بھارتی پولیس کی طرف سے درجنوں نوجوانوں کی حراست کے خلاف ضلع پلوامہ کے علاقے Tahab میں مکمل ہڑتال کی گئی۔
بھارتی پولیس نے Tahab میں تلاشی کی کارروائی کے دوران ستائیس نوجوانوں کو گرفتار کیا۔علاقے میں تمام دکانیں اور کاروباری ادارے بند ہیں جبکہ سڑک پر ٹریفک بھی معطل ہے۔