وزیراعظم نواز شریف کوریا کے وزیراعظم چنگ ہاگوان سے باتیں کر رہے تھے

 نوازشریف کی کوریا کے وزیراعظم کوملکی شراکتی حکمت عملی تیارکرنےکی دعوت
14 اپریل 2014 (14:44)
0

وزیراعظم نواز شریف نے اپنے کوریا کے ہم منصب کو اگلے تین سال کیلئے دونوں ملکوں کے درمیان ایک ملکی شراکتی حکمت عملی تیار کرنے کی دعوت دی ہے۔وہ کوریا کے وزیراعظم چنگ ہاگوان سے باتیں کر رہے تھے جنہوں نے اسلام آباد میں اپنے وفد کے ہمراہ ان سے ملاقات کی۔

 

انہوں نے کہا کہ کوریا کی کمپنیوں کے لئے پاکستان میں پانی ، ہوا ، سورج ، کوڑا کرکٹ اور کوئلے سے بجلی پیدا کرنے سمیت توانائی کے شعبے میں سرمایہ کاری کے وسیع مواقع ہیں۔وزیراعظم نے کہا کہ جمہوریہ کوریا کی ترقی پاکستان کیلئے باعث مسرت ہے اور ہم کوریا کے تجربات سے سیکھنا چاہتے ہیں۔

 

 

انہوں نے کہا کہ یہ بات خوشی کا باعث ہے کہ سال دو ہزار بارہ میں دونوں ملکوں کے درمیان تجارت ایک ارب ساٹھ کروڑ ڈالر رہی۔پاکستان نے دونوں ملکوں کے درمیان تجارتی حجم مزید بڑھانے کیلئے آزاد تجارت کے جامع معاہدے کی تجویز دی ہے جس کا محور تجارت ، سرمایہ کاری اور خدمات کے شعبے ہیں۔

 

نواز شریف نے اس دورے کے موقع پر کوریا کی ٹریڈ انوسٹمنٹ پروموشن ایجنسی اور پاکستان کے سرمایہ کاری بورڈ کی جانب سے مشترکہ کاروباری فورم کے انعقاد کو سراہا اور امید ظاہر کی کہ اس فورم کے نتیجے میں کوریا کی کمپنیاں توانائی ، بنیادی ڈھانچے کی ترقی ، ریلوے اور ٹیلی مواصلات کے شعبے میں سرمایہ کاری کریں گی۔

 

انہوں نے کہا کہ سمندر میں اور خشکی پر ایل این جی ٹرمینل کی تعمیر بھی کوریا کی کمپنیوں کیلئے سرمایہ کاری کے مواقع پیش کرتی ہے اور پاکستان ان شعبوں میں کوریا کے سرمایہ اور ٹیکنالوجی کا خیرمقدم کرے گا۔

 

نواز شریف نے کہا کہ پاکستان چین اقتصادی راہداری کے ساتھ آزاد اقتصادی زون کا قیام بھی کوریا کے سرمایہ کاروں کیلئے سرمایہ کاری کرنے کا موقع فراہم کرتا ہے۔

 

کوریا کے وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان اور کوریا کو تجارت ، معیشت اور توانائی کے شعبوں کو فروغ دینا چاہئیے اور نجی شعبے میں وفود کے تبادلوں میں اضافے کے ذریعے دوطرفہ تعلقات بڑھانے چاہئیں۔علاقائی اور عالمی امور پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔