Monday, 16 December 2019, 01:33:23 am
سینیٹ،حکومت کشمیر بارے موثر سفارتکاری کر رہی ہے،وزیرانسانی حقوق
November 14, 2019

انسانی حقوق کی وزیر ڈاکٹر شیریں مزاری نے کہا کہ حکومت مسئلہ کشمیر کے بارے میں فعال سفارت کاری پر عمل کررہی ہے اور پاکستان کے بیانیے کی دنیا بھر میں تائید کی جارہی ہے۔انہوں نے یہ بات حزب اختلاف کے رہنما راجہ ظفر الحق اور دیگر کی طرف سے سرینگر میںکرفیو اور لاک ڈائون اور حکومت کی مستقبل کی حکمت عملی کے بارے میں پیش کی گئی تحریک پر بحث سمیٹتے ہوئے کہی۔انہوں نے کہا کہ حکومت کی کوششوں سے پچاس برس کے بعد اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں مسئلہ کشمیر پر بحث کی گئی ہے۔انہوں نے کہا کہ امریکی کانگریس ' یورپی یونین کی پارلیمنٹ' برطانیہ' انسانی حقوق کی تنظیموں اور بین الاقوامی ذرائع ابلاغ نے مقبوضہ کشمیر کے غیر قانونی الحاق کی وجہ سے بھارت پر تنقید کی ہے۔انسانی حقوق کی وزیر نے کہا کہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں وزیراعظم عمران خان کی تقریر کے بعد پاکستان کے موقف کو تسلیم کیا گیا ہے۔انہوں نے کہا کہ بھارتی حکومت پر دبائو میںاضافہ ہوا ہے تاہم ابھی مزید دبائو کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہا کہ مسئلہ کشمیر پر عالمی عدالت انصاف کی ایڈوائزری رائے ضروری ہے اور حکومت اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے ذریعے اس پر عملدرآمد کرے گی۔اس سے پہلے بحث میں حصہ لیتے ہوئے سینیٹر نزہت صادق نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں کرفیو کی وجہ سے عوام علاج کیلئے ہسپتالوں تک پہنچنے سے قاصر ہیں۔میر طاہر خان بزنجو نے کہا کہ بعض ممالک بھارت سے اقتصادی تعلقات کی بنا پر مسئلہ کشمیر میں فعال کردار ادا نہیں کررہے ۔پرویز رشید نے کہا کہ حکومت کو عالمی برادری پر زور دینا چاہیے کہ وہ مقبوضہ کشمیر میں موبائل اور انٹرنیٹ کی سہولت بحال کرنے کیلئے کردار اداکرے۔ایوان نے ایک آرڈنینس کے ذریعے پاکستان میڈیکل اینڈ ڈینٹل کونسل تحلیل کرنے کے حکومتی فیصلے ، ذرائع ابلاغ پر مبینہ سینسر شپ اور بگڑتی ہوئی اقتصادی صورتحال مہنگائی اور گیس اور بجلی کی بڑھتی ہوئی قیمتوں سے متعلق کئی تحریکوں پربحث شروع کی ۔سینیٹر جاوید عباسی نے کہاکہ حکومت اس حقیقت کے باوجود کہ قومی اسمبلی اور سینیٹ کے اجلاس ہورہے ہیں آرڈنینسزنافذ کررہی ہے۔سینیٹر رحمن ملک نے کہاکہ بھارت پاکستان کو مالیاتی ایکشن ٹاسک فورس کی بلیک لسٹ میں شامل کرانے کی سازشیں کررہا ہے۔انہوں نے کہاکہ بھارتی وزیراعظم نریندرمودی دہشت گرد ثابت ہوچکا ہے لیکن ٹاسک فورس بھارت کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کررہی ۔رضا ربانی نے کہاکہ حکومت ملک کے نادار لوگوں کو درپیش مسائل سے بخوبی آگاہ ہے انہوں نے کہاکہ اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں کئی گنا اضافہ ہوا ہے۔ڈاکٹر مہرتاج روغانی نے کہاکہ پاکستان میڈیکل کمیشن آرڈنینس مجریہ 2019ء میں تبدیلیاں ناگزیر ہیں جس کا مقصد بین الاقوامی معیارات پرپورا اترنا ہے۔کبیر محمد SHAI نے کہاکہ ملک میں مہنگائی سے لوگ گھروں سے باہر نکل آئیں گے اور حکومت کے خلاف احتجاج کریںگے انہوں نے کہاکہ حکومت کی غلط پالیسیوں سے صنعتیں بند ہورہی ہیں۔