Monday, 16 December 2019, 02:26:42 am
جموں خطے کے مسلم اکثریتی علاقوں میں لوگوں کا بھارتی قبضے کیخلاف خاموش احتجاج
November 13, 2019

مقبوضہ کشمیر میں وادی کشمیر اور جموں خطے کے مسلم اکثریتی علاقوں میں لوگوں نے بھارتی قبضے کے خلاف اپنا خاموش احتجاج101 ویں روز جاری رکھا ۔

سڑکوں سے پبلک ٹرانسپورٹ غائب رہی تاہم کہیں کہیں نجی گاڑیاں چل رہی ہیں جبکہ دکانیں صرف صبح اور شام کو مختصر وقت کیلئے کھلتی ہیں۔

بھارتی فوجیوں کی بھاری تعداد میں موجودگی کے ساتھ ساتھ دفعہ 144 کے تحت سخت پابندیاں بھی عائد ہیں ۔

وادی کشمیر کے لوگوں کو انٹرنیٹ ' ایس ایم ایس اور پری پیڈ موبائل سروسز سے مسلسل محروم رکھا جارہا ہے۔

ادھر انسانی حقوق کے بارے میں امریکی کانگریس کا گروپ مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر اس ہفتے سماعت کرے گا ۔

انہوں نے کہاکہ گواہان کانگریس کی طرف سے کارروائی کیلئے تجاویز بھی طلب کریںگے۔

ہومن رائٹس کمیشن کے سربراہ ٹام لینٹاس نے سماعت کا اعلان کرتے ہوئے کہاکہ گواہان مقبوضہ کشمیر کی صورتحال کاجائزہ لیںگے۔

مقبوضہ کشمیر میں جموں وکشمیرپیپلزلیگ ' تحریک وحدت اسلامی ' ینگ مینز لیگ اور مسلم خواتین مرکز نے کہاکہ وہ جدوجہد آزادی کو اس کے منطقی انجام تک جاری رکھیں گے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ کشمیری عوام جموں وکشمیر کی تہذیبی اور اسلامی شناخت پر ڈاکہ ڈالنے کے بی جے پی حکومت کے مذموم منصوبوں کی مزاحمت کیلئے پرعزم ہیں۔

انہوں نے کہاکہ عوام بھارت کے غیرقانونی قبضے میں متحد ہوکر اورثابت قدمی کے ساتھ مذاحمت کریںگے اور بھارت ان کو دبانے میں کبھی کامیاب نہیں ہوگا۔