Friday, 28 February 2020, 11:32:05 pm

مزید خبریں

 
مقبوضہ کشمیر اور بھارتی جیلوں میں کم عمر بچوں سمیت 12ہزار سے زائد کشمیری قید
February 13, 2020

مقبوضہ کشمیر اور بھارت کی جیلوں میں کم عمر بچوں سمیت اس وقت 12ہزار سے زائد کشمیری قید ہیں۔ 

ایک رپورٹ کے مطابق ان میں سے 900کشمیری کالے قانون ''پبلک سیفٹی ایکٹ '' کے تحت نظر بند ہیں۔ بھارتی جیلوں میں کم از کم 600کشمیری قید ہیں جن میں محمد یاسین ملک ، شبیر احمد شاہ ، مسرت عالم بٹ، ڈاکٹر حمید فیاض، آسیہ اندرابی اور دیگر شامل ہیں۔ سابق علاقائی سیاسی رہنمائوں عمرعبداللہ اور محبوبہ مفتی پر بھی حال ہی میں پبلک سیفٹی ایکٹ لاگو کیا گیا۔ نظر بندوں کو طبی سہولیات اور مناسب غذا بھی فراہم نہیں کی جا رہی۔ نظر بندوں کو مقررہ تاریخوں پر عدالتوں میں بھی پیش نہیں کیا جاتا ۔ کشمیری نظربندوں کو اکثر و بیشتر ہندو توا نظریے سے وابستہ غنڈوں کی طرف سے تشدد کا سامنا بھی رہتا ہے۔ جموںوکشمیر کونسل فار جسٹس کے چیئرمین ایڈووکیٹ جی این شاہین نے سرینگر میں ایک میڈیاانٹرویو میں کہا کہ غیر قانونی طورپر حراست میں لیے گئے تمام کشمیریوں کو جھوٹے مقدمات میں قید کیا گیا ہے ۔ بھارتی پولیس نے ضلع بڈگام کے علاقوں گوندی پورہ اور وار ہامہ سے گھروں پر چھاپوں کے دوران پانچ نوجوان گرفتار کر لیے۔ ادھر سری نگر کے علاقے مائیسومہ میں ایک مسجد کے اندر بشیر احمد ڈار نامی کشمیری کی ذبح شدہ لاش پائی گئی ہے ۔