اجلاس میں فیصلہ کیاگیا کہ مجرموں کی پشت پناہی کرنے والوں کے خلاف بھی بلاامتیاز اور سیاسی وابستگی سے قطع نظر کارروائی کی جائے گی ۔

سندھ اپیکس کمیٹی کا مجرموں،دہشت گردوں کیخلاف کارروائی جاری رکھنے کا اعادہ
12 جولائی 2015 (20:23)
0

سندھ کے وزیراعلیٰ سید قائم علی شاہ نے مجرموں اور دہشتگردوں کے خلاف کارروائی پوری قوت سے جاری رکھنے کا اعادہ کیاہے ۔
وہ اتوار کے روزکراچی میں ایپکس کمیٹی کے اجلاس کی صدارت کررہے تھے ۔
سندھ پولیس اور سندھ رینجرز نے شہر میں امن وامان سے متعلق اپنی رپورٹیں پیش کیں ۔
اجلاس میں فیصلہ کیاگیا کہ مجرموں کی پشت پناہی کرنے والوں کے خلاف بھی بلاامتیاز اور سیاسی وابستگی سے قطع نظر کارروائی کی جائے گی ۔
اجلاس میں سندھ حکومت اور رینجرز کے درمیان ہم آہنگی اور تعاون پر اطمینان کا اظہار کیاگیا۔
اجلاس میں بتایا گیا کہ قانون نافذ کرنیو الے تمام اداروں کے درمیان ہر قیمت پر ہم آہنگی کو برقرار رکھا جائے گاتاکہ گھنائونے جرائم میں ملوث قانون شکن عناصر کو انصاف کے کٹہرے میں لایاجاسکے ۔
اس موقع پر سیاسی اور فوجی قیادت نے جرائم پیشہ عناصر اور دہشتگردوں کے خلاف کارروائی کو اس کے منطقی انجام تک جاری رکھنے کے عزم کا اظہار کیا۔
اجلاس میں دوسروں کے علاوہ گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العباد خان ، کورکمانڈر کراچی لیفٹننٹ جرنل نوید مختار، ڈی جی رینجرز میجر جنرل بلال اکبر، صوبائی وزیرداخلہ سہیل انور سیال، وزیراطلاعات شرجیل انعام میمن اور آئی جی سندھ غلام حیدر جمالی نے شرکت کی ۔

اجلاس کے بعد صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے سندھ کے اطلاعات اور بلدیات کے وزیر شرجیل انعام میمن نے کہا کہ پیپلز پارٹی کو سندھ میں اکثریت حاصل ہے اور رینجرز کے خصوصی اختیارات میں توسیع کا بل اسمبلی میںبآسانی منظور ہوجائے گا ۔
انہوں نے کہا کہ رینجرز کواختیارات میں اب ایک ماہ کے لئے توسیع دی گئی ہے اور اٹھارویں ترمیم کے بعد مزید توسیع کے لئے اسمبلی سے منظوری لینے کی ضرورت ہے انہوں نے کہاکہ ہمار ی کوشش ہے کہ بل کو اکثریت کے ساتھ اسمبلی سے منظور کرایا جائے ۔
شرجیل انعام میمن نے بتایا کہ پولیس اور رینجرزکی کارروائی جاری ہے جس کے بہت اچھے نتائج برآمد ہورہے ہیں اور بھتہ خوری اور اغوا برائے تاوان جیسے جرائم میں بڑی حد تک کمی آئی ہے ۔
اُنہوں نے کہا کہ دہشتگردوں کے معاونین اور ان کی مالی امداد کرنے والوں کی نشاندہی کی جارہی ہے اور دہشتگردی کے خاتمے کیلئے ان کے خلاف بھی کارروائی کی جائے گی ۔
صوبائی وزیرنے کہا کہ کارروائی کے دوران تکنیکی معاونت کیلئے ٹاسک فورس تشکیل دی گئی ہے ۔دہشتگردوں کے خلاف انٹیلی جنس مزید بہتر بنانے کیلئے لوگوں کے ساتھ روابط کو وسعت دی جائے گی ۔