Sunday, 15 September 2019, 10:55:21 pm
وزیراعظم کی تحقیقاتی کمیشن کے حوالے سے اعلیٰ سطح اجلاس کی صدارت
June 12, 2019

فائل فوٹو

وزیراعظم عمران خان نے بدھ کے روز اسلام آباد میں تحقیقاتی کمیشن کے حوالے سے ایک اعلی سطح اجلاس کی صدارت کی ۔

وزیرقانون فروغ نسیم احتساب کے بارے میں معاون خصوصی شہزاد اکبر اور آڈیٹر جنرل آف پاکستان جاوید جہانگیر نے بھی اجلاس میں شرکت کی ۔

اجلاس میں کمیشن آف انکوائری کے شرائط وضوابط کے مسودے کا جائزہ لیاگیا۔

اجلاس میں فیصلہ کیاگیا کہ وفاقی حکومت پاکستان کمیشن آف انکوائری ایکٹ 2017 کے تحت تحقیقاتی کمیشن قائم کرے گی جو آئی ایس آئی ' ایم آئی ' آئی بی ' سیکورٹی اینڈ ایکس چینج کمیشن آف پاکستان ' آڈیٹر جنرل آف پاکستان وفاقی تحقیقاتی ادارے اور دیگر کے اعلی افسران پرمشتمل ہوگا۔

کمیشن اس بات کی تحقیقات کرے گا کہ ملک کے قرضے میں 2008 سے 2018ء کے دوران چوبیس ہزار ارب روپے کا اضافہ کیسے ہوا جبکہ اس عرصے کے دوران ملک میں کوئی بڑا منصوبہ مکمل نہیں کیاگیا ۔

کمیشن عوامی رقم خرچ کرنے والی متعلقہ وزارتوں سمیت تمام وزارتوں اور ڈویژنز کاجائزہ لے گا اور جہاں بے ضابطگیاں پائی جائیں گی کمیشن وہاں اس رقم کی قومی خزانے میں واپسی کیلئے اقدامات کرے گا۔

کمیشن بیرون ملک دوروں' بیرون ملک علاج پراخراجات اوراعلی حکام کیلئے کیمپ آفس قراردئیے گئے ذاتی گھروں کیلئے سڑکوں اور بنیادی ڈھانچے کی تعمیر سمیت قومی خزانے کے ذاتی مفادات کیلئے استعمال کی بھی تحقیقات کرے گا۔

کمیشن اپنے ارکان کے علاوہ اپنی مدد کیلئے بین الاقوامی شہرت کے حامل فرنیزک آڈیٹرز ماہرین شامل کرنے کا اختیار ہوگا ۔

کمیشن اوراس کے سربراہ سمیت قواعد وضوابط کا اعلان اس ہفتے کے دوران کیاجائے گا ۔