وزیر خزانہ نے کہا کہ رپورٹ میں شامل کئی دستاویزات پر کوئی دستخط نہیں ہیں۔

file photo

مسلم لیگ (ن)جے آئی ٹی رپورٹ میں خامیوں کو سپریم کورٹ میں چیلنج کرے گی: ڈار 
11 جولائی 2017 (20:24)
0

وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ پانامہ پیپرز مقدمے میں جے آئی ٹی کی تحقیقاتی رپورٹ میں کئی نقائص اور خامیاں ہیں جنہیں جلد سپریم کورٹ میں چیلنج کیا جائے گا۔
وہ منگل کے روز اسلام آباد میں ریلوے کے وزیر خواجہ سعد رفیق اور وزیر اعظم کے معاون خصوصی بیرسٹر ظفر اللہ خان کے ہمراہ مشترکہ نیو ز کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے۔
اسحاق ڈار نے کہا کہ مسلم لیگ نون کی قانونی ٹیم رپورٹ کا جائزہ لے رہی ہے اور ردعمل دلائل اور ثبوت کے ساتھ عدالت میں پیش کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ رپورٹ میں شامل کئی دستاویزات پر کوئی دستخط نہیں ہیں۔
انہوں نے کہا کہ یہ رپورٹ جب سے عدالت میں پیش ہوئی ہے ایک منفی تاثر پیدا کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ حتمی فیصلے تک صبر و تحمل کا مظاہر ہ کرنا چاہیے اور جمہوری عمل کو جاری رہنا چاہیے۔
اسحاق ڈار نے مالیاتی امور میں اپنے خلاف لگائے گئے الزامات کو بے بنیاد قرار دیا ۔ انہوں نے کہاکہ میری ٹیکس ادائیگیوں اور مالیاتی امور کا سارا ریکارڈ دستیاب ہے جو عدالت میں پیش کر دیا جائے گا۔
اس موقع پر خواجہ سعد رفیق نے کہا کہ جے آئی ٹی کی طرف سے لگائے گئے الزامات کا جواب سپریم کورٹ میں دیا جائے گا۔
انہوں نے کہا کہ جے آئی ٹی نے عدالت میں پیش کی گئی دستاویزات کے بارے میں کوئی سوال نہیں پوچھا انہوں نے کہا کہ جے آئی ٹی نے جانبداری کا مظاہرہ کیا اور اس کی رپورٹ بدنیتی پر مبنی ہے۔
وفاقی وزیر نے کہا کہ جے آئی ٹی کی رپورٹ کو حکومت کے خلاف سازش کا حصہ قرار دیا انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف کے سربراہ جن کی پارٹی نے غیر ملکی فنڈنگ حاصل کی ہے اس سازش میں کلیدی کردار ادا کر رہی ہے۔
بیرسٹر ظفر اللہ نے کہا کہ جے آئی ٹی کی رپورٹ فیصلے کے طور پر پیش کی جارہی ہے جبکہ عدالت کے فیصلے اور تحقیقاتی رپورٹ میں بہت فرق ہے۔