Friday, 15 November 2019, 07:33:33 am
وزیراعظم نے تاریخی کرتاپور راہداری کا باضابطہ طور پر افتتاح کر دیا
November 09, 2019

وزیراعظم عمران خان نے ضلع نارووال میں بھارت سے سکھ یاتریوں کی گردوارہ دربار صاحب آمد میں سہولت فراہم کرنے کیلئے ہفتے کے روز باضابطہ طور پر تاریخی کرتارپور راہداری کو کھول دیا۔

انہوں نے کرتارپور راہداری کھولنے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ یہ محض ابتداء ہے۔

وزیراعظم نے امید ظاہر کی کہ مسئلہ کشمیر کے حل سے پورے جنوبی ایشیاء میں ترقی اور خوشحالی آئے گی۔

اس اقدام سے پاکستان اور بھارت کے درمیان دوطرفہ تعلقات میں بھی بہتری آئے گی۔

وزیراعظم نے کہا کہ جب انہوں نے حکومت سنبھالی تو انہوں نے اپنے بھارتی ہم منصب نریندر مودی کو پیغام بھیجا کہ ہمیں غربت کے خاتمے کیلئے سرحدیں کھولنے اور تجارت کو فروغ دے کر دوطرفہ مسائل کو حل کرنا چاہیے۔

تاہم انہوں نے افسوس کااظہار کیاکہ اس پیغام کا مثبت جواب نہیں دیا گیا اور آج جو کچھ کشمیر میں ہورہا ہے وہ مقبوضہ علاقے کے تنازعے سے بڑا مسئلہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ 80 لاکھ سے زائد کشمیری محاصرے میں ہیں اور یہ ایک انسانی مسئلہ بن گیا ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ اس وقت تک امن قائم نہیں ہوسکتا جب تک مسئلہ کشمیر مذاکرات کے ذریعے حل نہیں ہوتا۔

عمران خان نے بھارتی وزیراعظم کو کشمیریوں کے ساتھ انصاف کرنے کا پیغام بھیجا ہے انہوں نے کہا کہ مسئلہ کشمیر کے حل سے پاکستان اور بھارت کے عوام کو بے پناہ فوائد حاصل ہوں گے۔

وزیراعظم نے کہا کہ دلوں کو جوڑنا انسانیت کا سب سے بڑا ستون ہے انہوں نے کہا کہ اللہ کے ہر پیغمبر نے انسانیت اور انصاف کا پیغام دیا۔

عمران خان نے کہا کہ بابا گرونانک نے اپنی تعلیمات میں انسانیت اور محبت کا پیغام دیا۔

انہوں نے کہا کہ ہمارے پیارے نبیۖ نے جنہیں رحمت اللعالمین بناکر بھیجا گیا ہمیشہ محبت اور انسانیت کا درس دیا اور اپنے بدترین دشمنوں کو بھی معاف کر دیا۔

عمران خان نے کہا کہ کرتارپور کا کھلنا سکھوں کے لئے ایسے ہی ہے جیسے مسلمان مدینہ منورہ کے انتہائی قریب کھڑے ہوں اور وہاں جانہ سکتے ہوں۔

انہوں نے سکھ برادری کو سکھ مذہب کے بانی بابا گرو نانک دیوجی کے پانچ سو پچاسویں جنم دن کے موقع پر مبارکباد دی۔

انہوں نے فرنٹیئر ورکرز آرگنائزیشن اور راہداری پر کمپلیکس کی تعمیر میں شامل دیگر تنظیموں کو بھی مبارکباد دی۔

بھارت سمیت دنیا کے مختلف حصوں سے ہزاروں سکھوں نے تقریب میں شرکت کی۔

اس سے پہلے وزیراعظم نے گردوارہ دربار صاحب کے مختلف حصوں کا دورہ کیا اور انہیں اس کی تزئین و آرائش کے بارے میں بتایا گیا ۔ اب یہ دنیا کا سب سے بڑا سکھوں کا گردوارہ بن گیا ہے۔

گردوارہ دربار صاحب آمد پر وزیراعظم نے سابق بھارتی وزیراعظم من موہن سنگھ سے ہاتھ ملایا اور ان سے تبادلہ خیال کیا انہوں نے سابق بھارتی کرکٹر نوجوت سنگھ سدھو سے بھی ملاقات کی۔

پنجاب کے گورنر چوہدری سرور اور وزیر داخلہ اعجاز شاہ نے بھی من موہن سنگھ سے بات چیت کی۔