وفاقی وزیرخزانہ نے کہاہے کہ حکومت اگلے مالیاتی ایوارڈز کو حتمی شکل دینے کی بھرپور کوشش کر رہی ہے۔

ترقی کی شرح کا ہدف6 فیصد مقرر کیا جانا حقیقت پسندانہ ہے: اسحق ڈار
08 جون 2017 (15:12)
0

وزیر خزانہ اسحق ڈار نے کہا ہے کہ اگلے مالی سال کے لئے ترقی کی شرح کا ہدف چھ فیصد مقرر کیا جانا حقیقت پسندانہ اور قابل حصول ہے۔آج سینٹ میں بجٹ دوہزار سترہ اٹھارہ پر بحث سمیٹتے ہوئے انہوں نے کہا کہ رواں مالی سال کے دوران ملک کی شرح نمو پانچ اعشاریہ تین فیصد رہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ معاشی حجم تین سو ارب ڈالر تک پہنچ گیا ہے۔
وفاقی وزیر نے کہا کہ حکومت اگلے مالیاتی ایوارڈز کو حتمی شکل دینے کی بھرپور کوشش کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس معاملے پر صوبائی وزراء اعلیٰ کا اجلاس جلد بلایاجائے گا۔اسحق ڈار نے یقین دلایا کہ مالیاتی بل دو ہزار سترہ اٹھارہ کے بارے میں ایوان بالا کی پائیدار اور قابل عمل تجاویز پر غور کیا جائے گا۔
اسحق ڈار نے کہا کہ پچھلے چار سال کے دوران محصولات میں اسی فیصد تک اضافہ ہوا ۔ انہوں نے کہا کہ مالیاتی نظم ونسق کی وجہ سے ہم نے ترقیاتی اخراجات میں ایک ہزار ارب روپے مختص کئے ہیں جس میں بنیادی ڈھانچے اور توانائی کے شعبوں پر خصوصی توجہ دی گئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ بجلی کی پیداوار میں نمایاں بہتری آئی ہے اور حکومت نے ملک کی مستقبل کی ضروریات کو مدنظررکھتے ہوئے منصوبے شروع کئے ہیں۔
وفاقی وزیر نے کہا کہ سیاسی جماعتیں اپنے اختلافات نظرانداز کر دیں اور مل بیٹھ کر ایک میثاق معیشت وضع کریں۔

اس سے پہلے بحث میں حصہ لیتے ہوئے طلحہ محمود نے کہا کہ نجی شعبے کو مکمل سہولتوں کی فراہمی اور اسکی حوصلہ افزائی کی جانی چاہئیے تاکہ برآمدات کو فروغ دیا جا سکے اور روزگار کے موقع پیدا ہوں۔مومن خان آفریدی نے کہا کہ قومی مالیاتی ایوارڈز میں فاٹا کو پانچ فیصد حصہ دیا جانا چاہیے۔سعید الحسن مندوخیل نے وفاق کی اکائیوں میں ہم آہنگی اور اتحاد کی ضرورت پر زور دیا۔