امدادی کارروائیوں کے بارے میں وزیراعظم کے فوکل پرسن امیر مقام نے کہا ہے کہ چترال میں حالیہ بارشوں سے متاثرہ لوگوں کی بحالی کے لئے کوئی کسر اٹھانہ رکھی جائے گی۔

چترال کے سیلا ب متاثرہ علاقوں میں امدادی کارروائیاں تیز
08 جولائی 2016 (13:17)
0

وفاقی حکومت نے چترال کے بارشوں اور سیلال سے متاثرہ علاقوں میں امدادی کارروائیاں تیز کردی ہیں۔ چترال کے سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں امدادی کارروائیوں کے بارے میں وزیراعظم کے فوکل پرسن امیر مقام نے کہا ہے کہ چترال میں حالیہ بارشوں سے متاثرہ لوگوں کی بحالی کے لئے کوئی کسر اٹھانہ رکھی جائے گی۔

آج چترال میں مقامی لوگوں سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے یقین دلایا کہ متاثرہ آبادی کی امداد اوربحالی کیلئے تمام دستیاب وسائل فراہم کئے جائیںگے۔امیر مقام نے کہا کہ وزیراعظم نے لندن سے ٹیلیفون پر انہیں چترال میں امدادی سرگرمیوں کے بارے میں ہدایات دی ہیں۔فوکل پرسن نے کہاکہ وفاقی حکومت چترال کی ترقی کے لئے عملی اقدامات کررہی ہے جبکہ علاقے کو بجلی کی فراہمی بھی یقینی بنائی جائے گی۔
بعد میں چترال کے ڈپٹی کمشنر نے فوکل پرسن کو چترال میں سیلاب سے ہونے والی تباہی اورامدادی سرگرمیوں کے بارے میں تفصیلی بریفنگ دی۔انہوں نے بتایا کہ نو پلوں اور بائیس سڑکوں کی تعمیر کے لئے پانچ کروڑ روپے کی ایک سمری بھجوائی گئی ہے جبکہ پی ڈی ایم اے نے ایک کروڑ روپے جار ی کردئیے ہیں۔اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے امیر مقام نے کہا کہ ہم علاقے کے عوام کی سہولت کے لئے لواری ٹنل جلد مکمل کرنا چاہتے ہیں۔

ادھر قدرتی آفات سے نمٹنے کے قومی ادارے کے چیئرمین اصغر نواز نے آج چترال کے سیلاب سے متاثرہ دیہات ارسون کا دورہ کیا۔ وہ متاثرہ لوگوں سے ملے اورامدادی اشیا تقسیم کیں۔
اس موقع پر انہوں نے کہا کہ چترال کے بارشوں او ر سیلاب سے متاثرہ لوگوں کی مدد کیلئے خیبرپختونخواہ کے قدرتی آفات سے نمٹنے کے ادارے کو ہر ممکن تعاون فراہم کیاجائے گا۔

دوسری جانب ہلال احمر پاکستان نے چترال کے بارش اور سیلاب سے متاثرہ لوگوں میں امدادی سامان تقسیم کیا ہے۔امدادی سامان میں پلاسٹک کی باسکٹ واٹر فلٹرز اور دوسری ضروری اشیاء شامل تھیں۔متاثرہ لوگوں کو کھانے پینے کی اشیاء اور امدادی رقم پہلے ہی دی جاچکی ہے۔زخمیوں کو ضلعی ہیڈ کوارٹرز ہسپتال چترال میں بلا معاوضہ معالجہ کی سہولت بھی فراہم کی جارہی ہے۔