پارلیمانی امور کے وزیر مملکت نے سینیٹ کو بتایا کہ 71کلومیٹر طویل این فائیو کے،پشاور، کوہاٹ سکیشن کا36 کلومیٹر حصہ درست حالت میں ہے۔

گزشتہ 5 سال کے دوران بلوچستان میں44 نئے ڈاک خانے کھولے گئے
08 جولائی 2015 (14:30)
0

سینیٹ کو آج بتایا گیا کہ پچھلے پانچ سال کے دوران بلوچستان میں44 نئے ڈاک خانے کھولے گئے ہیں۔وقفہ سوالات کے دوران پارلیمانی امور کے وزیر مملکت شیخ آفتاب احمد نے ایوان کو بتایا کہ صوبے میں اس عرصے کے دوران فرنچائزڈ کی بنیادوں پر چلائے جانے والے 5 ڈاک خانے بند کئے گئے۔

ایک سوال پر انہوں نے کہا 71کلومیٹر طویل این فائیو کے،پشاور، کوہاٹ سکیشن کا36 کلومیٹر حصہ درست حالت میں ہے۔انہوںنے کہا کہ اس شاہراہ کے35 کلومیٹر حصے کی حالت مخدوش ہے جس کی رواں مالی سال کے دوران مرمت کی جائے گی۔

شیخ آفتاب احمد نے ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے ایوان کو بتایا کہ ایم ایٹ کے خضدارتور ڈیرو حصے کو پانچ پیکیجز میں تقسیم کیاگیاہے۔ انہوں نے کہا کہ شاہرائوں کے قومی ادارے کے تحت ملک بھر میں 39قومی شاہرائوں اور موٹرویز کی لمبائی بارہ ہزار ایک سو اکتیس کلومیٹرہے۔  انہوں نے کہا کہ گزشتہ پانچ سال کے دوران نیشنل ہائی وے نیٹ ورک کی مرمت کیلئے مجموعی طورپر55 ارب چھیانوے کروڑروپے خرچ کئے گئے۔


ایک سوال پر نیشنل ہیلتھ سروسز کی وزیر مملکت سائرہ افضل تارڑ نے کہا کہ انسداد تپ دق کا قومی پروگرام ملک میں ہر اندراج شدہ مریض تک مفت او رمعیاری ادویات کی بلاتعطل اور معمول کے مطابق فراہمی یقینی بنائے گا۔

ایوان نے قومی زرعی تحقیقاتی مرکز14 سو ایکٹر زمین سی ڈی اے کو رہائشی اور تجارتی پلاٹوں مجوزہ منتقلی کے بارے میں ایک قرارداد کی بحث کیلئے منظوری دی۔ یہ تحریک مشاہد حسین سید نے پیش کی تھی۔

قانون انصاف اورانسانی حقوق کے وزیر پرویز رشید نے ایوان کو بتایا کہ انسانی حقوق کے قومی کمیشن کے چیئرمین اور ارکان کا تقرر قانونی طریقہ کار کے مطابق کیاگیا ہے۔
آغا شہباز خان کے ایک توجہ دلائو نوٹس کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے کہاکہ فاٹا سے رکن کی تعیناتی کا عمل جاری ہے۔