ایوان بالا میں آئندہ مالی سال کے لئے بجٹ تجاویز پر بحث جاری۔

بجلی تقسیم،صوبوں سے کوئی امتیاز نہیں برتا جا رہا،عابد شیر علی
06 جون 2017 (17:44)
0

سینٹ نے آئندہ مالی سال کے لئے بجٹ تجاویز پر پھر بحث جاری رکھی۔
بحث میں حصہ لیتے ہوئے یعقوب ناصر نے ملک کی سلامتی اور اقتصادی صورتحال بہتر بنانے پر حکومت کے اقدامات کو سراہا۔
بحث میں حصہ لیتے ہوئے سسی پلیجو نے کہا کہ حکومت مالی سال دو ہزار سولہ سترہ کے لئے مقرر اقتصادی اہداف کے حصول میں ناکام ہو گئی ہے۔
میر کبیر نے کہا کہ بلوچستان میں ہنگامی بنیادوں پر چھوٹے ، درمیانے اور بڑے ڈیم تعمیر کئے جانے چاہئیں تاکہ صوبے میں پانی کی کمی کے مسئلے کو حل کیا جا سکے۔
شبلی فراز نے کہا کہ اتحاد اور ہم آہنگی کے فروغ اور ملک کے مثبت تشخص کو اجاگر کرنے کیلئے ثقافتی سرگرمیوں کو فروغ دینے کی ضرورت ہے۔
سردار اعظم خان موسیٰ خیل نے کہا کہ فاٹا کے مستقبل کا فیصلہ قبائلی عوام کی امنگوں کے مطابق کیا جانا چاہئیے۔
پانی و بجلی کے وزیر مملکت عابد شیر علی نے کہا ہے کہ بجلی کی تقسیم کے حوالے سے کسی صوبے کے ساتھ کوئی امتیاز نہیں برتا جارہا۔
وہ سینٹ میں خیبرپختونخوا میں بجلی سے متعلق نعمان وزیر خٹک اوردوسرے ارکان کے توجہ دلائو نوٹس کاجواب دے رہے تھے۔

وزیر مملکت نے کہا کہ وفاقی حکومت نے چکدرہ میں دو سو بیس کے وی کے گرڈ اسٹیشن کی تعمیر کی غرض سے چون کروڑ روپے جاری کردئیے تھے۔انہوںنے کہا کہ چھ ہزار پانچ سو میگاواٹ اضافی بجلی قومی گرڈ میں شامل کی گئی ہے اور آنے والے دنوں میں مزید بجلی شامل کی جائے گی۔
ایک توجہ اور دلائو نوٹس کا جواب دیتے ہوئے عابد شیر علی نے کہا پچھلے چار سال کے دوران کنٹرول لائن پر بھارتی بلا اشتعال فائرنگ سے اب تک تقریباً 66 افراد شہید اور228 زخمی ہوئے ہیں۔
ایوان میں چمن سرحد پر پاکستان کے رہائشی علاقوں میں مردم شماری کے عمل میں مصروف ایک ٹیم پر افغان سیکورٹی فورسز کی فائرنگ کے واقعے کے حوالے سے اعظم خان سواتی اور دیگر کی طرف سے پیش کی گئی تحریک التواء پر بحث کی۔ حملے میں شہری اور فوجی جوانوں کی قیمتی جانوں کا نقصان ہوا تھا۔
سینٹ کے ارکان نے پاک افغان سرحد پر قیمتی جانوں کے ضیاع پر تشویش کا اظہار کیا۔
اس موقع پر اظہار خیال کرنے والوں میں سید طاہر حسین مشہدی ، سحر کامران ، عبدالقیوم ، حافظ حمد اﷲ ، مشاہد حسین سید ، میر کبیر محمد شاہ ، تاج حیدر ، جان کینتھ ولیمز اور رحمان ملک شامل تھے۔
ایوان کا اجلاس اب کل صبح گیارہ بجے ہو گا۔