Friday, 15 November 2019, 07:49:40 am
پاکستان ادارہ جاتی اصلاحات کیلئے عالمی بینک کی مالی اور تکنیکی امداد کو قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہے،مشیر خزانہ
November 06, 2019

مشیرخزانہ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ نے کہا ہے کہ پاکستان ادارہ جاتی اصلاحات اور ملک کی اقتصادی ترقی کے لئے عالمی بینک کی فراہم کردہ مالی اور تکنیکی امداد کو قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہے۔انہوں نے یہ بات عالمی بینک کی نائب صدر مس Cyla Pazarbasioglu سے گفتگو کرتے ہوئے کہی جنہوں نے آج اسلام آباد میں ان سے ملاقات کی۔مشیرخزانہ نے بینک کے زیرتکمیل منصوبوں کو تیزی سے مکمل کرنے کے بارے میں حکومت کی توجہ اور اس سلسلے میں اقدامات کو اجاگر کیا۔مس Cyla Pazarbasioglu نے پاکستانی معیشت کو مستحکم کرنے اور دیرپا ترقی کی رفتار میں تیزی لانے کے لئے حکومت کے شروع کردہ اقتصادی اصلاحات کے پروگرام کو سراہا۔عالمی بینک کی ٹیم نے کاروبار میں سہولت فراہم کرنے کے حوالے سے درجہ بندی میں بہتری آنے پر مشیر خزانہ کو مبارکباد بھی دی۔عالمی بینک کی ٹیم نے مشیر کے ساتھ بحران کا شکار اداروں کو مستحکم کرنے کے پروگرام پر تبادلہ خیال کیا جس میں خزانہ ڈویژن میں مربوط قرضے کے انتظام کا دفتر بھی شامل ہے۔ ملاقات میں ٹیکس دائرئہ کار ، گردشی قرضے کی حکمت عملی اور قومی ٹیرف پالیسی کو مربوط بنانے پر بھی غور ہوا۔عالمی بینک ٹیم نے مشیر کو کاروباری ماحول اور ٹیکس وصولی کے نظام کو بہتر بنانے کے لئے پورے پاکستان میں سیلز ٹیکس نظام کو ہم آئنگ کرنے کے لئے عالمی بینک کی فراہم کی جانے والی امداد سے متعلق بتایا۔ اس سلسلے میں مشیر کو چالیس کروڑ ڈالر کے پاکستان کے ریونیو بڑھانے کے منصوبے میں پیشرفت سے بھی آگاہ کیا جس کا مقصد ایف بی آر کو مضبوط بنانا اور پاکستان کے ملکی ٹیکس ریونیو میں پائیدار اضافہ یقینی بنانا ہے۔منصوبے کے تحت مالی سال دوہزار تئیس ۔ چوبیس تک ٹیکس کو مجموعی ملکی پیداوار کے سترہ فیصد تک لایا جائے گا اور ٹیکس دائرہ کار کو توسیع دی جائے گی اور ٹیکس دہندگان کی تعداد 35 لاکھ تک بڑھائی جائے گی جو اس وقت بارہ لاکھ افراد ہے۔