Sunday, 18 August 2019, 11:34:19 am
چھیالیس ممالک کی کثیر ملکی امن مشق میں شرکت کی تصدیق
February 06, 2019

کثیرملکی بحری مشق امن 2019ء سے بحری تعاون اور سلامتی کے ہدف کے حصول کیلئے دوست ممالک کی بحری افواج کو جمع کرنے میں مدد ملے گی ۔

ان خیالات کا اظہار کمانڈر مرزا ارسلان بیگ اورلیفٹیننٹ کمانڈر جویریہ نسیم نے آج اسلام آباد میں ریڈیوپاکستان کے خبروں اور حالات حاضرہ چینل کے ایک پروگرام میں کیا ۔

کمانڈر مرزا ارسلان بیگ نے کہاکہ پاکستان 2007ء سے کثیرملکی بحری مشق امن کی میزبانی کررہا ہے۔

انہوں نے کہاکہ 28ممالک نے اپنے بحری جہازوں ، طیاروں اور مبصرین کے ساتھ پہلی مشق میں حصہ لیا تھا ۔

امن 2019 پرگفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ ابھی تک 46 ممالک نے کثیرملکی مشق میں حصہ لینے کی تصدیق کی ہے ۔

انہوں نے کہاکہ یہ ممالک مشق میں اپنے بحری اورہوائی جہاز ، خصوصی اور بحری افواج بھیجیں گے۔

کمانڈر ارسلان بیگ نے کہاکہ بحری مشق کے مقاصد میں علاقائی امن واستحکام میں کردار ادا کرنے پرپاکستان کے مثبت تشخص کو اجاگرکرنا اور علاقائی بحری حدود میں پاک بحریہ کے ممتاز مقام کو اور مضبوط کرنا ہے ۔

انہوں نے کہاکہ بحری سلامتی کو متعدد خطرات درپیش ہیں جن میں دہشت گردی ، منشیات کی اور انسانی سمگلنگ اور قدرتی آفات شامل ہیں جن سے نمٹنے کیلئے دیگر ممالک کے تعاون کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہاکہ اس مشق سے دوست ممالک کی بحری افواج کے درمیان تعاون کو فروغ ملے گا۔

بحری کمانڈر نے کہاکہ بحیرہ عرب ، بحری جہازوں کی نقل وحرکت کی مصروف ترین گزرگاہ ہے اور گوادر کی بندرگاہ کو اس کے جغرافیائی محل وقوع کی وجہ سے خصوصی اہمیت حاصل ہے۔

اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے لیفٹیننٹ کمانڈر جویریہ نے کہاکہ پرامن حالات میں اس طرح کی مشقیں افواج کو کسی بھی حقیقی متنازعہ صورتحال سے نمٹنے کیلئے تیار کرتی ہیں ۔

انہوں نے کہاکہ وہ اپنی سرزمین اورسمندری حدود میں امن کی خواہاں ہیں۔