نوازشریف نے کہاہے کہ پولیو کوشکست دینے میں کسی بھی کوتاہی یا غفلت کونئی نسل کےخلاف جرم تصورکیاجائےگا۔

وزیراعظم کاپولیوکوشکست دینےکاعزم
05 نومبر 2014 (10:13)
0

وزیراعظم نوازشریف نےپولیوکوشکست دینےکاعزم ظاہرکرتے ہوئےکہا ہے کہ اس سلسلے میں غفلت کو نئی نسل کے خلاف جرم تصور کیا جائے گا۔وہ آج اسلام آباد میں پولیو کے خاتمے سے متعلق رہبر کمیٹی کے اجلاس سے خطاب کر رہے تھےوزیراعظم نے کہا کہ وفاقی حکومت مسلح افواج اور سول سوسائٹی پولیو کے خلاف مہم میں متحد ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان عالمی برادری کے پولیو سے متعلق خدشات سے آگاہ ہے تاہم انہیں بھی ہمارے مسائل سمجھنے چاہئیں۔


نواز شریف نے کہا کہ ہمیں قبائلی علاقوں میں مہم چلانے کے دوران عدم رسائی ، دہشتگردی اور غلط تاثر جیسے مسائل کا سامنا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اس مہم میں دہشت گردوں نے ہمارے کارکنوں کو نشانہ بنایا ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ دہشت گردوں کے خاتمے کیلئے فوجی آپریشن کامیابی سے جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں پولیو کے خاتمے کی مہم میں بھی کچھ کامیابیاں ملی ہیں کیونکہ جنوبی اور شمالی وزیرستان ایجنسیوں میں اب بچوں کو پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلائے جا رہے ہیں۔


وزیراعظم نے کہا کہ حکومت تمام بچوں کو پولیو سے بچاؤ کی ویکسین کے قطرے پلانے اور پاکستان کو پولیو سے پاک ملک بنانے کیلئے پرعزم ہے۔ انہوں نے کہا کہ بیرون ملک سفر کرنے والوں کو صحت کے عالمی قوانین کے مطابق پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلانے کو یقینی بنایا جا رہا ہے وزیراعظم نے کہا کہ وہ انسداد پولیو مہم کی ذاتی طور پر نگرانی کر رہے ہیں اور ہر پندرہ روزبعد بریفنگ لے رہے ہیں۔

اس موقع پر جاپان نے پاکستان کو پچپن کروڑ روپے فراہم کرنے کا یقین دلایا جبکہ بل اینڈ میلنڈا گیٹس فاونڈیشن پولیو کے خاتمے کی مہم کیلئے سینتیس ارب روپے فراہم کرے گی۔


اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے کہا کہ ان کی حکومت پولیو کے خلاف مہم کو بہتر کرے گی اور اس ضمن میں دوسرے صوبوں سے رابطے قائم کئے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب میں گزشتہ پانچ برسوں میں پولیو کے تین کیسز سامنے آئے ہیں تاہم اب ایک کیس بھی سامنے آنے کا کوئی جواز نہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم اس مہلک وائرس کے مکمل خاتمے کیلئے سنجیدہ ہیں۔


وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ نے کہا کہ پولیو ایک قومی مسئلہ ہے اور اسکے خاتمے کیلئے وفاقی اور صوبائی حکومتوں کو مل کر کام کرنا چاہئیے۔


خیبر پختونخواء کے وزیراعلیٰ پرویز خٹک نے کہا کہ پولیو کے کیسز میں اضافے کے باعث صوبے میں پولیو ایمرجنسی نافذ کر دی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ امن وامان کی صورتحال نے پولیو کے خلاف کوششوں کو نقصان پہنچایا ہے تاہم ہر بچے کو پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلانے کیلئے پرعزم ہیں۔


وزیراعلیٰ بلوچستان ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ نے کہا کہ ان کے صوبے میں گزشتہ دو برس کے دوران پولیو کا ایک کیس بھی سامنے نہیں آیا۔ انہوں نے کہا کہ انسداد پولیو مہم کی کامیابی کیلئے ایمرجنسی آپریشنل سیل اور کابینہ کی ذیلی کمیٹی قائم کر دی گئی ہے۔ ہم نے پولیو سے بچاؤ کی مہم کیلئے درکار رقوم کا مسئلہ حل کرنے کیلئے صوبے میں گردشی فنڈکے انتظامات کئے ہیں۔