دفتر خارجہ کے ترجمان نفیس ذکریا نے افغانستان سے کہا کہ وہ پاکستانی فورسز کے خلاف فائرنگ بند کرے۔

پاکستان کا چمن سرحد کے قریب افغان فورسز کی بلااشتعال فائرنگ پر گہری تشویش کا اظہار
05 مئی 2017 (14:20)
0

پاکستان نے چمن سرحد کے قریب افغان فورسز کی جانب سے ہلااشتعال فائرنگ پر گہری تشویش کا اظہار کیا ہے۔آج اسلام آباد میں اپنی ہفتہ وار پریس بریفنگ میں دفتر خارجہ کے ترجمان نفیس ذکریا نے کہا کہ دونوں ملکوں کے درمیان سرحد کا واضح تعین ہے اور پاکستانی ٹیمیں اپنے علاقے میں مردم شماری کررہی تھیں جو کہ ہمارا حق ہے۔
ترجمان نے افغانستان سے کہا کہ وہ پاکستانی فورسز کے خلاف فائرنگ بند کرے۔ انہوں نے کہا کہ اگر وہ ایسا نہیں کرتا تو پھر پاکستان اپنی سا لمیت اور شہریوں کے تحفظ کے لئے جوابی کارروائی کا حق محفوظ رکھتا ہے۔
افغان صدر کے حالیہ بیان کے بارے میں سوال کے جواب میں ترجمان نے کہا کہ افغانستان کے مسائل خالصتاً اندرونی ہیں تاہم ان مسائل کو دوسرے ملکوں کے ساتھ جوڑنا یا الزام لگانا مددگار ثابت نہیں ہو ۔ انہوں نے کہا کہ الزام تراشی سے اجتناب ہر فریق کے مفاد میں ہے کیونکہ اس کا کوئی فائدہ نہیں۔
ایک سوال کے جواب میں نفیس ذکریا نے کہا کہ پاکستان افغانستان کے امن عمل میں چین اور امریکہ کے اہم کردار کا معترف ہے ۔ انہوں نے کہا کہ دونوں ملک چارفریقی رابطہ گروپ کے عمل کا حصہ ہیں جنہوں نے افغانستان کی حکومت اور جنگجو دھڑوں کو مذاکرات کی میز پر لانے کے لئے سنجیدہ کوششیں کی ہیں۔
بھارت سے متعلق ترجمان نے کہا کہ بھارت افغانستان کے مسائل کا حصہ ہے نہ کہ اسکے مسائل کے حل میں مددگار۔انہوں نے کہا کہ بھارت افغانستان کی سرزمین پاکستان کو غیرمستحکم کرنے کیلئے استعمال کر رہا ہے اور پاک افغان تعلقات کو خراب کر رہا ہے۔