Tuesday, 22 September 2020, 09:48:41 am
آزاد جموں و کشمیر قانون ساز اسمبلی کی متفقہ قراردادمیں بھارتی غیر قانونی اقدامات کی مذمت
August 05, 2020

آزاد جموں و کشمیر قانون ساز اسمبلی نے ایک متفقہ قرارداد میں گزشتہ سال پانچ اگست کو بھارت کے غیرقانونی،غیراخلاقی اور غیرآئینی اقدام کی شدید مذمت کی جس کے تحت مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کی گئی تھی۔

ایوان نے مقبوضہ وادی میں بھارتی قابض فورسز کی جانب سے انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کی بھی مذمت کی اور اقوام متحدہ اور انسانی حقوق کے عالمی اداروں سے مطالبہ کیا کہ وہ مقبوضہ وادی میں بھارتی مظالم بند کرانے میں مدد کرے۔
یہ قرارداد قائد ایوان راجہ فاروق حیدر نے پیش کی جس میں غیرقانونی طور پر گرفتار کئے گئے حریت رہنماؤں کی نظربندی پر شدید تشویش ظاہر کی گئی اور ان کی فوری رہائی کا مطالبہ کیا گیا۔
اس سے پہلے آزادجموں و کشمیر کے وزیراعظم راجہ فاروق حیدر نے قانون ساز اسمبلی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ خطے میں بھارت کے مخاصمانہ عزائم عالمی امن کے لئے شدید خطرہ ہیں۔
انہوں نے کہا کہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے کے غیرقانونی بھارتی اقدام کا مقصد مقبوضہ علاقے کی مسلم اکثریتی آبادی کا تناسب تبدیل کرنا ہے۔
آزادکشمیر کے وزیراعظم نے کہا کہ حق خودارادیت کشمیریوں کا بنیادی حق ہے اور وہ تمام ترمشکلات کے باوجود اپنی جدوجہد آزادی کو ہر قیمت پر کامیاب بنائیں گے۔
انہوں نے بھارتی مظالم بے نقاب کرنے کے لئے عالمی سطح پر جارحانہ سفارتکاری کے آغاز کی ضرورت پر بھی زور دیا۔
وزیراعظم نے کہا کہ معاشی طور پر مستحکم پاکستان کشمیر کی جدوجہد آزادی کی کامیابی کی ضمانت ہے۔
راجہ فاروق حیدر خان نے مقبوضہ کشمیر کے مظلوم عوام سے اظہار یکجہتی کے لئے مظفرآباد کا دورہ کرنے پر وزیراعظم عمران خان کا شکریہ ادا کیا۔