ترجمان نے کہا کہ کشمیر بارے بھارت کا موقف اقوام متحدہ کی قراردادوں کی کھلی خلاف ورزی ، جبری تسلط کا بدترین نمونہ اور جموں وکشمیر کے عوام کو انکا ناقابل تنسیخ حق خودارادیت دینے سے واضح انکار پر مبنی ہے۔

بھارت جموں وکشمیر پر غیرقانونی طور پر قابض ہے:دفتر خارجہ
03 جون 2015 (17:27)
0

پاکستان نے بھارتی وزارت خارجہ کے ترجمان کے اس بیان کو مسترد کر دیا ہے جس میں انہوں نے دعویٰ کیا کہ گلگت بلتستان سمیت پورے جموں وکشمیر کی ریاست بھارت کا اٹوٹ انگ ہے۔
بدھ کے روز اسلام آباد میں دفتر خارجہ کے ترجمان نے ایک بیان میں کہا کہ یہ بات یاد رکھنی چاہئیے کشمیر عالمی سطح پر ایک تسلیم شدہ تنازعہ ہے جسے اقوام متحدہ کی زیر نگرانی آزادانہ اور غیرجانبدارانہ استصواب رائے سے حل کیاجانا ہے جس کا عالمی ادارے کی متعدد قراردادوں میں وعدہ کیا گیا ہے۔
انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کی قراردادوں کے تحت کسی زمینی تبدیلی کی اجازت نہیںدی جا سکتی تاہم بھارت ان قراردادوں کی مکمل خلاف ورزی کرتے ہوئے اسے اپنی ریاست کا حصہ قرار دے رہا ہے۔
ترجمان نے کہا کہ بھارت کا یہ کہنا کہ گلگت بلتستان میں پیر کو ہونے والے انتخابات پاکستان میں علاقے پر اپنے جبری اور غیرقانونی تسلط پر پردہ ڈالنے کی کوشش ہے ، پاکستان کے داخلی معاملات میں مداخلت ہے۔
انہوں نے کہا کہ حقیقت یہ ہے کہ بھارت جموں وکشمیر پر غیرقانونی طور پر قابض ہے اور متنازعہ علاقے پر اپنے اس غیرقانونی تسلط کو برقرار رکھنے کیلئے اس نے وہاں سات لاکھ سے زائد فوج تعینات کر رکھی ہے۔ کشمیری مسلمانوں کی اکثریتی آواز کو دبانے کیلئے ظلم وبربریت کی اور بندوق کی نوک پر جعلی انتخابات کرائے۔
ترجمان نے کہا کہ بھارت کی طرف سے مسئلہ کشمیر کے منصفانہ حل سے متعلق سلامتی کونسل کی قراردادوں پر عملدرآمد سے مسلسل انکار کے باعث یہ تنازعہ تاحال برقرار ہے۔
کشمیر کے بارے میں بھارت کا موقف اقوام متحدہ کی قراردادوں کی کھلی خلاف ورزی ، جبری تسلط کا بدترین نمونہ اور جموں وکشمیر کے عوام کو ان کا ناقابل تنسیخ حق خودارادیت دینے سے واضح انکار پر مبنی ہے