وزیر اعظیم محمد نواز شریف کی سینیٹر جان مکین کی قیادت میں امریکی سینیٹ کے پانچ رکنی وفد سے ملاقات

03 جولائی 2017 (17:11)
0

وزیراعظم محمد نواز شریف نے کہا ہے کہ خطے اور دنیا بھر کو درپیش مختلف مسائل کے حل کیلئے پاکستان اور امریکہ کے درمیان پائیدار اور مضبوط اشتراک عمل ناگزیر ہے۔انہوں نے یہ بات آج اسلام آباد میں سینیٹر جان مکین کی قیادت میں امریکی سینیٹ کے پانچ رکنی وفد سے ملاقات میں کہی۔
وزیراعظم نے وفد کو دہشتگردی کے خلاف جنگ میں حکومت کی کوششوں کے بارے میں بتایا۔انہوں نے کہا کہ پاکستان میں سیکورٹی کی واضح طور پر بہتر صورتحال سے ہماری کامیابیوں کا اندازہ لگایا جاسکتا ہے۔
وزیراعظم نے افغانستان اور بھارت کے ساتھ تعلقات کی بہتری کیلئے اپنی حکومت کے عزم کا اعادہ کیا۔انہوں نے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں اور نہتے افراد پر بھارتی فورسز کے وحشیانہ تشدد پر گہری تشویش ظاہر کی ۔
وزیراعظم نے کشمیر کے نصب العین کی حقانیت پر زور دیا اور کہا کہ عالمی برادری کو کشمیری عوام کی مشکلات کے خاتمے میں اپنا کردار ادا کرنا چاہئے۔انہوں نے ملک کی اقتصادی بحالی پر روشنی ڈالی جس کی بدولت سرمایہ کاروں کے پاکستان پر اعتماد اور دلچسپی میں اضافہ ہوا ہے۔
وزیراعظم نے پھر کہا کہ پاکستان افغانستان میں پائیدار امن واستحکام کیلئے تمام کوششوں میں تعاون جاری رکھے گا۔انہوں نے کہا کہ افغانستان کے زیر قیادت امن عمل کے تحت مذاکرات کے ذریعے سیاسی تصفیے کیلئے ٹھوس کوششیں کرنا ہوں گی۔
نواز شریف نے افغان مصالحتی عمل میں سہولت کیلئے چار فریقی رابطہ گروپ کی اہمیت پر بھی زور دیا۔

سینیٹر میک کین نے اتفاق کیا کہ خطے میں امن ا ور استحکام کے حصول کیلئے امریکہ اور پاکستان کے درمیان مسلسل قریبی تعاون بہت ضروری ہے۔
انہوں نے کہا کہ امریکہ پاکستان کے ساتھ اپنے تعلقات کو بہت اہمیت دیتا ہے۔امریکی سینیٹروں نے دہشتگردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کے کردار، قربانیوں اور کامیابیوں کو سراہا۔