ای سی او کے سیکرٹری جنرل حلیل ابراہیم نے امید ظاہر کی کہ وزیراعظم نواز شریف کی مدبرانہ قیادت میں اقتصادی تعاون تنظیم مزید ترقی کرے گی۔

ای سی او رہنماؤں کاعلاقائی اقتصادی تعاون اور روابط پر زور
01 مارچ 2017 (13:22)
0

اقتصادی تعاون تنظیم کا تیرہواں سربراہ اجلاس اسلام آباد میں ہوا جس میں علاقائی اقتصادی تعاون اور روابط بڑھانے پر تفصیلی غور کیا گیا۔تمام دس رکن ملک اور میزبان پاکستان سربراہ نے اجلاس میں شرکت کی۔ چین اور اقوام متحدہ کے خصوصی نمائندے بھی اجلاس میں شرکت کی ۔اجلاس کا موضوع " علاقائی خوشحالی کیلئے روابط" جو چین اقتصادی راہداری کے منصوبے کے تناظر میں خصوصی اہمیت کا حامل ہے۔

ای سی او کے سیکرٹری جنرل حلیل ابراہیم نے وزیراعظم کو سربراہ اجلاس کا چیرمین منتخب ہونے پر مبارکباد دی اور امید ظاہر کی کہ اُن کی مدبرانہ قیادت میں اقتصادی تعاون تنظیم مزید ترقی کرے گی۔انہوں نے کہا کہ سربراہ اجلاس کی نہ صرف اقتصادی تعاون تنظیم کی کارکردگی کا جائزہ لینے بلکہ مستقبل میں تنظیم کیلئے رہنمائی کے حوالے سے بھی انتہائی اہمیت ہے۔

اقتصدی تعاون تنظیم کے مجموعی خدوخال اجاگر کرتے ہوئے حلیل ابراہیم نے کہا کہ ای سی او کے خطے کی آبادی 47 کروڑ دس لاکھ تک پہنچ گئی ہے جبکہ اس کی مجموعی پیداوار ایک کھرب ڈالر سے تجاوز کرگئی ہے انہوں نے کہا کہ تجارت، مواصلات اور توانائی ایسے بنیادی شعبے ہیں جن پر تنظیم کی طرف سے توجہ دی جانی چاہیے۔اقتصادی تعاون تنظیم کے سیکرٹری جنرل نے کہا کہ راہداریوں پر خصوصی توجہ دی گئی ہے جو اقتصادی تعاون تنظیم کے خشکی میں گھرے رکن ملکوں تک رسائی فراہم کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ سیاحت کو اقتصادی تعاون تنظیم کے ویژن میں ترجیحی شعبوں میں شامل کیا گیا ہے۔
انہوں نے کہا کہ ای سی او اقوام متحدہ اور دوسری علاقائی و عالمی تنظیموں کے ساتھ مختلف شعبوں میں مفاہمتی یاداشتوں اور معاہدوں پر دستخط کئے ہیں۔

سربراہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے آذربائیجان کے صدر الہام علیوف نے بنیادی ڈھانچے رابطے اور نقل و حمل کے شعبوں میں اقتصادی تعاون تنظیم کے رکن ملکوں کے درمیان باہمی تعاون کی ضرورت پر زور دیا۔انہوں نے اسلام مخالف پروپیگنڈے کی بھی مذمت کی اور واضح کیا کہ اسلام ایک پرامن مذہب ہے اور اسے دہشت گردی کے ساتھ نہیں جوڑنا چاہیے۔صدر الہام علیوف نے نگورنو کاراباخ کے معاملے میں حمایت پر پاکستان کا شکریہ ادا کیا۔

ترکمانستان کے صدر امام علی رحمان نے اپنے خطاب میں کہا کہ اقتصادی تعاون تنظیم کے رکن ملکوں کو خطے میں مواصلاتی روابط اور توانائی کے نیٹ ورک کے فروغ کیلئے بنیادی ڈھانچے کے مشترکہ منصوبوں پر عملدرآمد پر زیادہ توجہ دینی چاہیے۔انہوں نے کہا کہ اقتصادی تعاون تنظیم کی سرگرمیوں سے رکن ملکوں میں سماجی و اقتصادی ترقی کے فروغ، غربت کے خاتمے اور عوام کا معیار زندگی بہتر بنانے میں مدد ملے گی۔

سربراہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ایران کے صدر حسن روحانی نے کہا کہ سربراہان مملکت و حکومت کے درمیان وسیع تر افہام و تفہیم کے ساتھ ہم تنظیم کے پروگراموں اور سرگرمیوں کو آگے بڑھانے کیلئے نمایاں پیشرفت کے قابل ہوں گے۔انہوں نے کہا کہ ای سی او ہمارے خطے کا معاشی مستقبل سنوارنے میں اہم کردار ادا کرسکتی ہے اور اس مقصد کیلئے ای سی او کی تنظیم نو کی ضرورت ہے۔
انہوں نے کہا کہ 21 ویں صدی ایشیاء کی معیشت کی ترقی کا دور ہے کیونکہ اقتصادی سرگرمیاں مغرب سے مشرق کو منتقل ہورہی ہیں۔
انہوں نے کہا کہ ہمیں اقتصادی تعاون تنظیم کے رکن ملکوں کو شاہراہوں کے ذریعے ایک دوسرے سے منسلک کرنا ہوگا کیونکہ روابط کا فروغ ایشیاء کی ترقی اور خوشحالی کیلئے معاون ثابت ہوگا۔حسن روحانی نے کہا کہ ایران تنظیم کو مضبوط بنانے کیلئے اپنا کردار ادا کرنے کو تیار ہے۔انہوں نے کہا کہ اقتصادی تعاون تنظیم کے 13 ویں سربراہ اجلاس کا پاکستان میں انعقاد نیک شگون ہے اس سے تنظیم کے طویل مدتی منصوبوں پر عملدرآمد میں مدد ملے گی۔

ترکی کے صدر رجب طیب اردوان نے کانفرنس سے خطاب کر تے ہو ئے کہا کہ اجلاس کا بنیادی مقصد علاقائی روابط کا فروغ ہے۔خطے کی ترقی کیلئے علاقائی روابط انتہائی ضروری ہیں۔انہوں نے کہا کہ ترکی نے علاقائی ترقی کیلئے مختلف منصوبے شروع کیے ہیں۔ ای سی او ملک ان منصوبوں میں شامل ہوں۔صدر رجب طیب اردوان نے کہا کہ رکن ملکوں کی حقیقی ترقی کیلئے توانائی کے شعبے پر توجہ اور خطے کی افرادی قوت اور مہارت سے فائدہ اٹھانے کی ضرورت ہے ۔ ترک صدر نے کہا کہ مذہبی انتہا پسندی اور بد امنی خطے کی ترقی کی راہ میں رکاوٹ ہے۔ داعش اور اس طرح کے دوسرے چیلنجز سے مل کر نمٹنے کی ضرورت ہے۔

ترکمانستان کے صدر قربان علی بردی محمدوف نے اجلاس سے خطاب میں کہا خطے میں امن کے فروغ کیلئے بھرپور تعاون فراہم کرنے کیلئے تیار ہیں۔خطے کے ممالک کو قابل تجدید توانائی کے ذرائع کو بروئے کار لانے پر توجہ دینا ہو گی۔انہوں نے کہا کہ نئی اقتصادی راہداریوں کی تعمیر سے معاشی ترقی اور عالمی تعاون کو فروغ دیا جا سکتا ہے۔افغانستان کی صورتحال کا ذکر کرتے ہوئے ترکمانستان کے صدر نے کہا کہ افغانستان میں امن پورے خطے کی معاشی ترقی کیلئے کلیدی حیثیت رکھتا ہے ۔افغانستان میں امن علاقائی ،عالمی اور خود افغان عوام کے مفاد میں ہے۔ انہوں نے کہا ترقی کیلئے ضروری ہے کہ ای سی او کو سیاسی تنازعات کا شکار نہ ہونے دیا جائے گا۔۔

ازبکستان کے نائب وزیراعظم الغ بیگ روزوکلوف نے کہا کہ خطے میں پائیدار ترقی کیلئے امن ناگزیر ہے۔ٹرانسپورٹ کے شعبے میں ازبکستان بہترین صلاحیتوں کا مالک ہے اورتعمیراتی سامان اور ٹرانسپورٹ کی برآمدات میں بھی مقام رکھتا ہے۔انہوں نے کہا کہ آگے بڑھنے کیلئے ہمیں ایک دوسرے کے تجربات سے فائدہ اٹھاتے ہوئے مشترکہ حکمت عملی اپنانا ہو گی ۔